عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Thursday, December 13,2018 | 1440, رَبيع الثاني 5
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
2015-01 آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
امت کی یادداشت
:عنوان

. ثقافت :کیٹیگری
ادارہ :مصنف

 

امت کی یادداشت

 ایقاظ ڈیسک

کسی دانا کا قول ہے: تاریخ کسی قوم کی اجتماعی یادداشت کا نام ہے۔

مسلمان بطور ایک عالمی جماعت، روئےزمین کا مرکزی ترین کردار ہے۔ ایک عام قوم کی زندگی میں بھی اپنے ماضی سے آگاہ رہنے کی اتنی اہمیت ہے، تو پھر ’’مسلمان‘‘ کےلیے تو اس کی تاریخ ایک بےحد بڑا مضمون ہے۔ یہ اِس کے وجود کی کہانی ہے، جو بہت پیچھے سے چلی آرہی ہے اور اسے آگے بہت دور تک جانا ہے۔ اہل زمین کے احوال، صلاح و فساد کا یہ سارا گراف ’’مسلمان‘‘ کے عروج و زوال سے مربوط ہے۔ تاریخ سے ناواقفیت اپنے وجود سے لاعلمی ہے۔ خود اِس دین اور عقیدہ کے کئی ایک مضامین تاریخ نہ پڑھنے والے شخص سے روپوش رہتے ہیں۔  لیکن جہاں آج ہم اور بےشمار اشیاء سے لاعلم ہیں، وہیں ہم الا ماشاء اللہ اپنی تاریخ کے علم سے بھی کورے ہیں۔

ایقاظ یہاں مطالعۂ تاریخ کا ایک سلسلہ شروع کر رہا ہے۔ یہ قسط وار مضامین تاریخ کا ایک  نہایت مختصر مطالعہ ہوگا، جس سے ہمارے تحریکی نوجوان کو اپنے ماضی کی ایک عمومی تصویر مل جائے گی۔ تفصیلی مطالعہ ظاہر ہے ایک ماہنامہ کے اندر ممکن نہیں، شوق رکھنے والے حضرات اس کےلیے دیگر مصادر سے رجوع کر سکتے ہیں۔ کوشش کی جائے گی کہ یہ مطالعہ تاریخ مختصر ہونے کے باوجود ہمہ پہلو ہو۔ اچھے اور برے پہلو سب ایک ساتھ ہوں، حیاتِ انسانی کے متعدد شعبوں پر اس میں نظر ڈالی گئی ہو، اور مسلم ماضی کا کوئی گوشہ اس میں چھوٹ نہ گیا ہو۔

یہ مطالعہ ہم آئندہ شمارہ سے شروع کریں گے، ان شاء اللہ۔ یہاں مطالعہ تاریخ کی ضرورت و افادیت پر چند کلمات کہے جاتے ہیں:

1) تاریخ کا ایک طالب علم ہی یہ جان سکتا ہے کہ یہ امت زمینی عمل میں کیا کردار ادا کرتی آئی ہے۔ اس پہلو سے ناواقف آدمی کےلیے دین اور عقیدہ چند عبارتوں کا نام رہ جاتا ہے۔ ہاں تاریخ پڑھ کر مسلمان اپنے آپ کو روئےزمین پر ’’چلتا ہوا‘‘ پاتا ہے، جہاں وہ پہاڑوں، ریگزاروں، میدانوں، دریاؤں اور سمندروں کو عبور کرتا ہوا آگے بڑھ رہا ہے اور براعظموں کے براعظم اس کی نگاہِ حق شناس کی زد میں آتے ہیں۔ یوں مسلمان کتابوں سے نکل کر جہانی عمل سے وابستہ ہونے لگتا ہے۔ قرآن مجید میں ’’عقیدہ‘‘ کا ایک مجرد ذکر نہ ہونا بلکہ انبیاء اور ان کے مدمقابل طاغوتوں کو سامنے رکھتے ہوئے تاریخ کی کہانی بیان ہونا، نفس پر قوی اثرات ڈالتا ہے۔

2)  تاریخ پڑھنے والا خدائی سنتوں سے آگاہ ہوتا ہے۔ عروج و زوال کے قوانین اس سے محو گفتگو ہونے لگتے ہیں۔ اور اسے اندازہ ہوتا ہے کہ زمین عمل معجزات کا منتظر نہیں ہوتا، کچھ اٹل قوانین کا پابند ہوتا ہے، اور صالحین کو بھی انہیں سے واسطہ ہونا ہوتا ہے۔

3) ’’اخلاقی عروج و زوال‘‘ قوموں کی زندگی میں کس کس طرح اثرانداز ہوتا ہے، یہ مضمون بھی تاریخ پڑھنے پر اچھا خاصا انحصار کرتا ہے۔

4)  تاریخ پڑھ کر آپ میں حوصلہ پیدا ہوتا ہے کہ ایک بدترین گھٹاٹوپ صورتحال کو دیکھ کر بھی آپ مایوس نہ ہوں اور روشنی کے منتظر رہیں۔ دوسری طرف ایک آسودہ ترین صورتحال میں بھی برے ایام سے بےخوف نہ ہوں۔ وہ وَتِلْكَ الْأَيَّامُ نُدَاوِلُهَا بَيْنَ النَّاسِ  کے معانی اپنی آنکھوں کے سامنے دیکھتا ہے۔ جو شخص یہ دیکھ آیا ہو کہ تاریخ نے اس سے پہلے کیسے کیسے موڑ مڑے ہیں وہ یہاں کی کسی صورتحال کو حتمی نہیں سمجھتا۔ یوں وہ حوصلہ اور عزم پیدا ہوتا ہے جو ایک بدترین صورتحال کو اعلیٰ ترین صورتحال سے بدل دینے کےلیے میدان میں جا اترتا اور نامساعد حالات کو خاطر میں لانے سے انکاری ہو جاتا ہے۔ بایں طور آدمی خدا کی مدد کو آواز دے لاتا اور اپنی قوم کو ذلت و ادبار سے رہا کرا لاتا ہے۔

5)  مطالعہ تاریخ کے دوران آدمی پر حق اور باطل کا وہ رشتۂ مخاصمت بھی واضح ہوتا ہے جو ازل سے چلا آتا ہے۔ خیر اور شر کی وہ پلٹ جھپٹ جو قرآن میں قصۂ آدم و ابلیس سے بیان ہونا شروع ہوئی، انسانی تاریخ بھی آدمی کو اُسی کہانی کا ایک منطقی تسلسل نظر آتی ہے۔

6)  باطل کی چالیں سمجھ آنا بھی اسی مطالعہ کا حصہ ہے، کیونکہ تاریخ میں انسان کو واقعات اور ان کے عواقب سے معاملہ پیش آتا ہے۔ تب مسلمان ایک سادہ لوح شخص نہیں رہتا بلکہ واقعات کو زیادہ گہرائی میں جا کر دیکھنے کی استعداد پیدا کرتا ہے۔

7)  انسان پر یہ واضح ہوتا ہے کہ اُس کا جو آج ہے وہ پچھلے ایک عرصۂ دراز میں کیے جانے والے اجتماعی اعمال اور ریویوں کا نتیجہ ہے۔ اور اُس کے وہ اجتماعی اعمال اور رویے جو آج انجام پا رہے ہیں اس کے کل کی تخلیق کرنے والے ہیں۔ اس سے نہ صرف انسان میں ایک اجتماعی سوچ پیدا ہوتی، اور انسان شعوری طور پر ’’الجماعۃ‘‘ کا حصہ بنتا ہے، بلکہ ’’لمبا چلنے‘‘ کی ایک ذہنیت اس کے اندر جنم لیتی ہے جوکہ کامیاب قوموں کی سب سے بڑی ضرورت ہوا کرتی ہے۔ نہ ماضی، حال سے منقطع رہتا ہے اور نہ مستقبل، حال سے۔

8) روئے زمین پر ’’انسان‘‘ کی فاعلیت آشکار ہوتی ہے۔

9)  تاریخ پر اثرانداز ہونے والی صالح شخصیات خودبخود انسان کا آئیڈیل بنتی ہیں۔ نیز تاریخ کے کچھ گھناؤنے اور شرمناک کردار آدمی کےلیے عبرت بنتے ہیں۔

10)       قوموں کو اپنے زخموں اور رخم کاروں سے آگاہی ملتی ہے۔

تو پھر اگلے شمارہ سے ہم اپنا یہ سلسلۂ مطالعہ شروع کریں گے، ان شاء اللہ!

 

 

 

 

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر
Featured-
ثقافت- خواتين
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر اجالا عثمان انٹرنیٹ سے لی گئی ایک تحریر جو ہمیں ا۔۔۔
ویلنٹائن ڈے کی مخالفت کیوں؟
ثقافت- رواج و رجحانات
ذيشان وڑائچ
میرے ایک معزز دوست نے ویلینٹائن ڈے کے حوالے سے ایک پوسٹ پیش کی ہے۔ پوسٹ شروع ہوتی ہے اس جملے سے"ویلنٹائن ۔۔۔
بليو ويل گيم۔۔۔۔۔۔۔۔ ايك مرتى تہذيب
ثقافت- معاشرہ
عرفان شكور
بليو ويل گيم۔۔۔۔۔۔۔۔ ايك مرتى تہذيب   بليو ويل كو ايك قاتل گيم كے طور پر جانا جارہا ہے جس نے 150 سے زا۔۔۔
حُنَفَاء کا حج و قربانی.. اور ’انتھروپالوجسٹوں‘ کا شرک
بازيافت- تُراث
ثقافت- علوم طبعى وسماجى
اصول- عبادت
حامد كمال الدين
حُنَفَاء کا حج و قربانی.. اور ’انتھروپالوجسٹوں‘ کا شرک ’کھنڈر پرستی‘ کی ایک عالمی تحریک جس کا ۔۔۔
بدترین برگ و بار والا مذہب
ثقافت- معاشرہ
باطل- ہوشياركن
حامد كمال الدين
بدترین برگ و بار والا مذہب   تحریر: حامد کمال الدین عزیزم کاشف نصیر کے اس ٹویٹ نے مجھے ا۔۔۔
سرمایہ دارانہ نظام اور جنسیانے کا عمل
ثقافت- رواج و رجحانات
ابو زید
سرمایہ دارانہ نظام اور جنسیانے کا عمل بچیوں کے لباس پر سپرنگر جرنل نامی ایک مغربی ادارے کی ایک تحقیق سا۔۔۔
قدروں کا نوحہ
ثقافت- معاشرہ
متفرق-
محمد قطب
محمد قطبؒ اخلاق باختگی کا ایک طوفان کچھ زخموں کو ہرا کر جاتا ہے، گو یہ سال بھر مندمل نہیں ہوتے۔ ۔۔۔
ویلنٹائن ڈے منانے کا کیا حکم ہے؟
ثقافت- معاشرہ
شیخ محمد صالح المنجد
ویلنٹائن ڈے منانے کا کیا حکم ہے؟ الحمد للہ: پہلی بات: ویلنٹائن ڈے رومانوی جاہلی دن ہے، اس دن کا جشن رومانیوں۔۔۔
ویلنٹائن ڈے تہذیبوں کی جنگ کا ایک اہم ہتھیار
ثقافت- معاشرہ
مہتاب عزيز
ویلنٹائن ڈے تہذیبوں کی جنگ کا ایک اہم ہتھیار چودہ فروری کو منائے جانے والے یوم محبت یا ویلنٹائں ڈے کی ابتدا۔۔۔
ديگر آرٹیکلز
Featured-
باطل- جدال
حامد كمال الدين
کچھ ’مسلم‘ معترضینِ اسلام! تحریر: حامد کمال الدین پچھلے دنوں ایک ٹویٹ میرے یہاں سے  ہو۔۔۔
اصول- منہج
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
پراپیگنڈہ وار propaganda war میں سیگ منٹیشن segmentation (جزء کاری) ناگزیر ہوتی ہے۔ یعنی معاملے کو ای۔۔۔
بازيافت-
ادارہ
ہجرت کے پندرہ سو سال بعد! حافظ یوسف سراج کون مانے؟ کسے یقیں آئے؟ وہ چار قدم تاریخِ ان۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
میرے اسلام پسندو! پوزیشنیں بانٹ کر کھیلو؛ اور چال لمبی تحریر: حامد کمال الدین یہ درست ہے کہ۔۔۔
احوال- امت اسلام
ذيشان وڑائچ
ہمارے کچھ نوجوان طیب اردگان کے بارے میں عجیب و غریب الجھن کے شکار ہیں۔ کوئی پوچھ رہا ہے کہ۔۔۔
احوال- امت اسلام
حامد كمال الدين
’’سلفیوں‘‘ کے ساتھ تھوڑی زیادتی ہو رہی ہے!    عرب داعی محترم ابو بصیر طرطوسی کے ساتھ بہت م۔۔۔
اصول- عقيدہ
اداریہ-
حامد كمال الدين
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار..  اور امت کا طائفہ منصورہ حالات کو سرسری انداز میں پڑھنا... واقعات م۔۔۔
احوال-
اصول- منہج
راہنمائى-
حامد كمال الدين
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز تحریر: حامد کمال الدین میری نظر میں، اس۔۔۔
Featured-
ثقافت- خواتين
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر اجالا عثمان انٹرنیٹ سے لی گئی ایک تحریر جو ہمیں ا۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
"نبوی منہج" سے متعلق ایک مغالطہ کا ازالہ حامد کمال الدین ایک تحریکی عمل سے متعلق "نبوی منہج۔۔۔
متفرق-
ادارہ
پطرس کے ’’کتے‘‘ کے بعد! تحریر: ابو بکر قدوسی مصنف کی اجازت کے بغیر شائع کی جانے والی ای۔۔۔
باطل- فرقے
اعتزال
ادارہ
ایک فیس بکی بھائی نے غامدی صاحب کی جہاد کے موضوع پر ویڈیو کا ایک لنک دے کر درخواست کی تھی کہ میں اس ویڈیو کو ۔۔۔
باطل- فرقے
احوال- وقائع
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ایک بڑی خلقت واضح واضح اشیاء میں بھی فرق کرنے کی روادار نہیں۔ مگر تعجب ہ۔۔۔
باطل- كشمكش
حامد كمال الدين
تحریر: حامد کمال الدین کہتا ہے میں اوپن ایئر میں کیمروں کے آگے جنازے کی اگلی صف کے اندر ۔۔۔
احوال-
باطل- شخصيات و انجمنيں
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ’’تنگ نظری‘‘ کی ایک تعریف یہ ہو سکتی ہے کہ: ایک چیز جس کی دین میں گنجائش۔۔۔
جہاد- مزاحمت
احوال- امت اسلام
حامد كمال الدين
کشمیر کےلیے چند کلمات حامد کمال الدین برصغیر پاک و ہند میں ملتِ شرک کے ساتھ ہمارا ایک سٹرٹیجک معرکہ ۔۔۔
ثقافت- رواج و رجحانات
ذيشان وڑائچ
میرے ایک معزز دوست نے ویلینٹائن ڈے کے حوالے سے ایک پوسٹ پیش کی ہے۔ پوسٹ شروع ہوتی ہے اس جملے سے"ویلنٹائن ۔۔۔
بازيافت- تاريخ
ادارہ
علاء الدین خلجی اور رانی پدماوتی تحریر: محمد فہد  حارث دوست نے بتایا کہ بھارت نے ہندو۔۔۔
کیٹیگری
Featured
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
امت اسلام
ذيشان وڑائچ
امت اسلام
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
منہج
حامد كمال الدين
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
ادارہ
تاريخ
ادارہ
سلف و مشاہير
مہتاب عزيز
مزيد ۔۔۔
باطل
جدال
حامد كمال الدين
فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فرقےاعتزال
ادارہ
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
خواتين
ادارہ
رواج و رجحانات
ذيشان وڑائچ
معاشرہ
عرفان شكور
مزيد ۔۔۔
جہاد
مزاحمت
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ابن علی
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
ادارہ
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز