عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Tuesday, November 20,2018 | 1440, رَبيع الأوّل 11
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
2016-07 آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
تیئیس مارچ "مسلمان" کے طور پر اپنی شناخت کرانے کا دن
:عنوان

ہم پوچھتے ہیں وہ ’’رہن سہن‘‘ آخر ہے کیا جو ایک سانجھے ملک میں رہ کر برقرار نہیں رہ سکتا؟ لبرل ڈسکورس کے ساتھ ایک مکالمہ

. باطل > فرقے > ديگر :کیٹیگری
حامد كمال الدين :مصنف

23 مارچ "مسلمان" کے طور پر اپنی شناخت کرانے کا دن

23 مارچ پر ہمارے سوشل میڈیا فورمز پہ دی جانے والی ایک تحریر۔ ایک سوال جو 23 مارچ کو خصوصی طور پر اٹھانا بنتا ہے۔ لبرل ڈسکورس کے ساتھ ایک مکالمہ:

اس سلسلہ میں مزید پڑھیے: 23مارچ (قراردادِپاکستان) پر لبرلز کی خوشی بنتی ہے!

14 اگست کی بات ابھی تھوڑی مختلف ہے۔ محض ’آزادی‘ تو آپ کو معلوم ہے ایک دن کے فرق کے ساتھ بھارت بھی مناتا ہے۔ اور ویسا ایک دن تو تقریباً تیسری دنیا کے ہر ملک میں منایا جاتا ہے۔ مگر 23 مارچ کا واحد مطلب ’’مسلمان‘‘ کے طور پر جہان میں اپنی شناخت کرانا ہے۔ اپنا قومی وجہِ امتیاز: ’’مسلمان‘‘ ہونا۔ باقاعدہ اس بات کو ملک مانگنے کی ایک بنیاد بنانا کہ ہم ’’مسلمان‘‘ ہیں اور اس بنیاد پر ہم ہندو اکثریت کے علاقوں سے جدا اور خودمختار ہونا چاہتے ہیں۔ اِس ’23 مارچ‘ یعنی قراردادِ پاکستان کی تاویل میں اب کوئی جو مرضی کہہ لے، ’’مسلمان‘‘ اس کا مرکزی مضمون رہے گا۔ اِس مخلوق کو کسی اور قومی تہوار سے آپ ’منہا‘ کر بھی دیں، ’’23 مارچ‘‘ سے اِسے کسی صورت نہیں نکالا جا سکتا۔

’مذہب کا فرق‘ اِس تہوار سے باقاعدہ جڑا ہے۔ ٹھیک ہے اس کی وہ تفسیر آپ کو قبول نہیں جو مذہبی طبقے کے ہاں چلتی ہے۔ لیکن 23 مارچ باقاعدہ ’’منا‘‘ کر آپ اس کے کسی کم از کم مضمون اور اس کے لوازم کے پابند تو بہرحال ہوتے ہیں۔ چلیے دیکھ لیتے ہیں ’’مسلمان اور ہندو کا بٹوارہ‘‘ وہ کم از کم کیا مضمون رکھتا ہے جس کا انکار کسی بھی فریق کےلیے مشکل ہے۔

اِس دعوے کو لے لیتے ہیں کہ ’ہندو اور مسلمان‘ کے مابین علیحدگی اُس مفہوم سے نہیں جو مُلا کے ذہن میں آتی ہے، یہ تو محض کچھ معاشی جہتوں سے تھی۔ مان لیا، کئی کئی کروڑ پر مشتمل دو عظیم الشان گروہ اپنے مابین ’معاشی مفادات‘ کے سوا کوئی کھچاؤ یا ٹکراؤ نہیں رکھتے۔ مگر سوال تو  یہ ہے کہ انہیں ’دو گروہ‘ کر دینے والی وہ کیا چیز تھی جو دونوں کو اس سنگین معاشی رقابت تک لے پہنچی؟ ظاہر ہے ایسا تو نہیں ہوا کہ معاشی رقابت پہلے ہو گئی اور پھر اِس چیز نے ایک فریق کو ہندو کر دیا اور ایک کو مسلم! سو یہ سوال تو جوں کا توں رہا، کس چیز نے انہیں ایک دوسرے کا حریف کر دیا جو یہ بات بات پر آپس میں الجھتے ہیں یہاں تک کہ ان میں سے ایک فریق اپنے لیے الگ ملک مانگ لیتا ہے اور آپ اس کیمپ میں ہیں جس نے اس علیحدگی کا مطالبہ کیا پھر اس کا جشن منا کر آپ علیحدگی کے اس فیصلے کو آج بھی درست قرار دے رہےہیں۔

چونکہ ’معاشی مفادات‘ درست مان کر بھی اِس کہانی کی تفسیر بہرحال نہیں ہوتی، لہٰذا  کچھ چھوٹ دینا پڑی: مسلمان کا ہندو سے الگ تھلگ ایک قوم ہونا جو ایک علیحدہ ملک مانگ لینے تک پہنچا محض ایک ’رہن سہن‘ (ثقافت) کے فرق کی بنیاد پر تھا جسے یار لوگوں نے باقاعدہ ادیان کا فرق بنا ڈالا!

اس پر ہم اپنی بات دو نقاط میں کریں گے:

1۔     یہاں آپ نے کم از کم یہ مانا کہ ’’مسلمان‘‘ اور ’’ہندو‘‘ کے مابین ’’رہن سہن‘‘ (ثقافت) کا فرق کوئی عام سا فرق نہیں۔ بلکہ یہ بجا طور پر اتنا بڑا فرق ہے کہ اس کی بنیاد پر دو قومیں ایک دوسرے سے الگ ہو جایا کریں اور ہمیشہ ہمیشہ کےلیے اپنے راستے جدا کر لیں۔ یہ تو آپ کو معلوم ہے ملک الگ کرنے کی نوبت آنا کوئی معمولی بات نہیں۔ یہ کوئی عام سا فرق ہوتا تو دونوں کے پرسنل لاء الگ الگ بنا کر گزارہ ہو جاتا۔ آخر کیا مسئلہ ہے مسلمان عید کی چھٹی کر لیں، ہندو دیوالی کی۔ مسلمان کے نکاح، طلاق اور وراثت کے قوانین اور ہوں ہندو کے اور۔ مسلمان عبادت کےلیے مسجد میں جائے، ہندو مندر میں۔ اب بھی، کیا دونوں ملکوں میں ایسا ہو نہیں رہا؟ ہم پوچھتے ہیں وہ ’’رہن سہن‘‘ آخر ہے کیا جو ایک سانجھے ملک میں رہ کر برقرار نہیں رہ سکتا؟ مسلمان اور ہندو کے مابین رہن سہن کا فرق۔ ہو گا۔ مگر آپ تو ماشاءاللہ ہمارے ساتھ یہ ماننے لگے کہ یہ ایک اتنا بڑا فرق ہے کہ دونوں فریق اس بنیاد پر اپنا اپنا ملک الگ کر لیں؟ ظاہر ہے، یہ وہ عام سا رہن سہن نہیں جو کسی بھی کمیونٹی کو کسی بھی ملک میں حاصل ہوتا ہے۔ وہ عام معنیٰ کا ’’رہن سہن‘‘ تو ان دونوں قوموں کا دونوں ملکوں میں اکٹھا اب بھی چل رہا ہے: ہندوؤں کا رہن سہن پاکستان میں آج بھی ویسے کا ویسا ہے اور مسلمانوں کا رہن سہن بھارت میں آج بھی جوں کا توں۔ تو پھر کیا یہ (عمومی معنیٰ میں رہن سہن کا فرق) کوئی ایسی بات تھی جو مسلمان دلی، کلکتہ اور لکھنؤ میں قائم نہیں رکھ سکتے تھے اور ہندو لاہور، حسن ابدال اور میانوالی میں قائم نہیں رکھ سکتے تھے؟ رہن سہن، یار! آپ ملک الگ کرنے چلے! اس کےلیے چلیے ’آزادیاں‘ مانگ لیں (یہ ’رہن سہن‘ کی آزادیاں دونوں ملکوں کے دستور میں درج بھی ہیں)۔ کیا اس کےلیے باقاعدہ ’’ملک‘‘ مانگ لیے جاتے ہیں؟!

اب یہ جو ’23 مارچ‘ آپ نے پورے قومی جوش و خروش کے ساتھ منایا.. یہاں آپ نے ہندو اور مسلمان کے مابین آخر کوئی تو غیرمعمولی فرق تسلیم کیا۔ آپ نے کہا: رہن سہن کی حد تک۔ ہم نے کہا: ’رہن سہن‘ کا ایک تو وہ (سیکولر) معنیٰ ہے جو آج بھی ہندوؤں کو پاکستان میں حاصل ہے (اپنے مذہب کے مطابق ’پرسنل لائف‘ گزارنے کی آزادی) اور جو آج بھی مسلمانوں کو بھارت میں حاصل ہے۔ یہ ’رہن سہن‘ کا فرق اگر اس (سیکولر) معنیٰ میں ہے.. تو آپ یہ گتھی ہمیں سلجھا دیجئے کہ ملک ایک ہونے کی صورت میں اس (’رہن سہن‘) کو فرق کیا پڑتا اور ملکوں کا بٹوارہ ہو جانے کی صورت میں اس کے ہاتھ کیا آتا؟ ہاں اگر ’رہن سہن‘ کا کوئی اور معنیٰ ہے اور وہ اس عمومی معنیٰ سے بڑھ کر ہے جو ہندو کو پاکستان میں حاصل ہے اور مسلمان کو بھارت میں حاصل ہے، اور جس کےلیے لازماً برصغیر کے دو ٹکڑے ہی ہو جانے چاہئیں تھے، اور جوکہ مسلمان اور ہندو کی مشترکہ قومی زندگی کے اندر ممکن الحصول ہی نہیں تھا (’23 مارچ‘ کا واضح مدلول)... تو پھر باقی سب تعبیر کا فرق ہے، باعتبارِ مضمون آج آپ نے ہمارے ’’اسلامی پاکستان‘‘ ہی کا جشن منایا ہے۔

2­۔     ایسا کہہ کر آپ نے یہ بھی مانا کہ خود اِس ملک کی بنیاد ہی ہندو سے الگ رہن سہن رکھنا ہے۔ لہٰذا ہندو کے ساتھ اس رہن سہن کے فرق کو زندہ اور نمایاں کرنا اس ملک کے بنیادی ترین مقاصد میں سے ایک ہوا۔ اور اِس فرق کو حاشیائی کرنا یا ایسا معمولی سا کر دینا جو ہندوستان میں رہ کر بھی مسلمان رکھ سکتا ہے، اِس ملک کے وجود کو بے معنیٰ کر دینا ہے۔ بتائیے لبرل ڈسکورس میں اس بات کی گنجائش بھی کب ہے؟

*****

’’معاشی مفادات‘‘ والے نقطے پر ابھی ہمیں تھوڑی گفتگو اور کرنی ہے۔ ہم خود مانتے ہیں، برصغیر کے مسلمان کے معاشی مفاد کو محفوظ کرنا ہندو سے اپنی راہ الگ کرنے کے پیچھے ایک بڑا مقصد تھا اور ایسا کرنا بالکل حق تھا۔ ہمارے نزدیک تو ہندو سے مسلمان کی ایک ایک چیز کو بچانا ضروری ہے۔ سوال صرف اتنا ہے، یہ معاشی مفادات آپ ’مذہب‘ کی بنیاد پر ہی کیوں الگ الگ کر رہے ہیں؟ آپ نتیجے پر تو بےشک پہنچ گئے ہیں لیکن اُس سبب کو طرح دے رہے ہیں جس نے سب سے پہلے ان کو دو الگ الگ جماعتیں بنایا اور پھر ان میں وہ بُعد پیدا کیا کہ دونوں کو ایک دوسرے کے مقابلے پر اپنےاپنے ’’مفاد‘‘ کی فکر کرا دی۔ ہم بھی تھوڑی دیر کےلیے کہہ دیتے ہیں، اور ویسے اصولاً بھی اس میں کوئی مانع نہیں کہ: اگر صرف مفادات ہی محفوظ ہو سکتے ہوں تو بھی مسلمان کو ہندو سے الگ ملک دے دیجئے۔ لیکن آپ تو اُس اصل نقطے کو گول کرانا چاہتے ہیں جس نے ’مفادات‘ کے اس فرق کو ’’ہندو اور مسلم‘‘ کے سوا کوئی اور عنوان دینا قبول نہ کیا۔ تھوڑا غور تو کیجئے۔ ظلم زیادتی انسانوں کی سرشت میں ہے۔ امتیاز discrimination کی بنیادیں انسانوں کے مابین بےشمار ہیں۔ اِس ہند کے اندر راجپوت کروڑوں میں ہوں گے۔ جاٹ کروڑوں میں ہوں گے۔ گوجر کروڑوں میں ہوں گے۔ یہاں ہندو بھی آپ کو راجپوت ملیں گے اور مسلمان بھی۔ ہندو بھی جاٹ ملیں گے اور مسلمان بھی۔ ہندو بھی گوجر ملیں گے اور مسلمان بھی۔ پنجابی اور مہاراشٹری میں بہت سا فرق ہو سکتا ہے۔ گجراتی اور آسامی میں پرایا پن کے بےشمار پہلو ہو سکتے ہیں۔ آخر کیا وجہ ہے ’مفادات‘ کی یہ سوچ ہندو راجپوتوں اور مسلم راجپوتوں کو کبھی ایک نہیں کرتی؟ کیا ایک برادری نہیں؟ ہندو جاٹوں اور مسلم جاٹوں کو ایک نہیں کرتی؟ ہندو اور مسلم پنجابیوں کو مثال کے طور پر ہندو و مسلم مہاراشٹریوں کے مقابلے پر ایک نہیں کرتی۔ ہندو اور مسلم گجراتیوں کو ہندو و مسلم آسامیوں کے مقابلے پر ایک نہیں کرتی؟ شروع سے آخر تک وہ ایک ہی بات آخر یہاں کیوں ہے جو مسلم راجپوت کے مفاد کو ہندو راجپوت کے مفاد کے مقابلے پر لے آتی ہے، حالانکہ یہ ایک برادری ہیں؟ مسلم جاٹ کو ہندو جاٹ کے مقابلے پر ہی ’مفادات‘ کی فکر کرواتی ہے، حالانکہ یہ ایک ذات ہیں؟ مسلم گوجر کا ’مفاد‘ مسلم پٹھان کے ساتھ تو نتھی کرواتی ہے لیکن ہندو گوجر کے ساتھ اس کے ’مفاد‘ ہی کا بیر ڈال دیتی ہے۔

بلکہ اس سے بھی بڑھ کر ایک بات پر غور کریں۔ دَلَت (نیچ ذات) اور اونچی برادریوں کے مابین مفادات کا ٹکراؤ ہندوستان کی پوری ایک تاریخ رکھتا ہے۔ لیکن یہ تاریخی ٹکراؤ بھی اس نوبت کو نہیں آتا بلکہ اس کا خیال تک پیدا نہیں ہوتا کہ دونوں کے مفادات الگ الگ ملک کا تقاضا کرنے لگیں۔ پس آپ نے جس بات کی ’نشاندہی‘ فرمائی وہ اپنی جگہ بجا، لیکن ہمارا تو سوال یہ ہے کہ ہندوستان کے اس جنگل میں جہاں انسانوں کے مابین امتیاز کے بےشمار عنوان ہیں مگر ان میں سے کوئی بھی امتیاز.. جی ہاں کوئی ایک بھی امتیاز ان کے باہمی مفادات اس حد تک متصادم نہیں ٹھہراتا کہ ان کے مابین ’ملکوں‘ کا فرق ڈال دینے کو خود آپ بھی جائز کہیں... وہاں ایک فرق ایسا ہے جس نے ان کروڑوں انسانوں کے مابین ’مفادات‘ کو اس حد تک متصادم اور حسّاس کر دیا ہے کہ خود آپ نے یہ فتویٰ دے ڈالا کہ ان کو ملک الگ الگ کر ہی لینے چاہئیں تھے اور ایسا اعلیٰ مطالبہ قبول ہونے پر تاحیات جشن ہونے چاہئیں! اور اس ایک ’’جائز فرق‘‘ کا نام ہے ’’ہندو بمقابلہ مسلمان‘‘ جس پر آج سارا دن الحمد للہ آپ جشن مناتے رہے ہیں! اس کو ’مفادات‘ کا فرق کہہ کر آپ نے درحقیقت کسی مسئلے کا حل نہیں کیا۔ وہ اصل سوال جوں کا توں ہے۔

اور اگر کچھ نکتہ ور یہ فرمائیں کہ ’مذہب‘ کا ڈالا ہوا یہ فرق جائز کب ہے، ہماری (لبرلز کی) نظر میں تو یہ افسوس ناک ہے کہ ان کروڑوں انسانوں کے مابین تفریق کے باقی سب عنوان پیچھے چلے گئے اور اس ایک ہی عنوان نے ان کو ’’دو قومیں‘‘ کر دیا۔ نیز یہ کہیں کہ یہ تو ایک المیہ ہے کہ ’مذہب‘ کے فرق نے دونوں کے مابین ایسی دوری ڈال دی کہ دونوں کے ’معاشی مفادات‘ ایک ساتھ نہ چل سکتے تھے، لہٰذا ہم (لبرل) اس کو ایک واقعے کے طور تو تسلیم کرتے ہیں مگر اصولاً تو ’مذہب‘ کی اٹھائی ہوئی اِس دوری کو ہم رد ہی کرتے ہیں... تو ہم ان سے کہیں گے کہ پھر یہ آپ کے عقیدے کے خلاف ایک واقعہ ہوا، تم نے سارا دن اس پر بھنگڑے کس بات کے ڈالے؟

ہماری مثال لے لو۔ بنگلہ دیش کے الگ ہونے کو ایک واقعہ کے طور پر تو ظاہر ہے ہم مانتے ہی ہیں۔ لیکن ’بنگلہ دیش‘ کی کسی قرارد کے پیش ہونے کے دن ہم جشن نہیں منا رہے ہوتے بلکہ ایسا کوئی دن منایا جا رہا ہو تو ہمارے زخم ہرے ہو جاتے ہیں۔

پس ’مذہب‘ کے اٹھائے ہوئے ’مفادات‘ کے ایک نزاع پر تمہاری یہ خوشیاں سیکولرزم کے کئی ایک مضامین کی نفی ضرور ہے۔ اور فی الوقت یہ بھی کافی ہے۔

 

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
کچھ مسلم معترضینِ اسلام!
Featured-
باطل- جدال
حامد كمال الدين
کچھ ’مسلم‘ معترضینِ اسلام! تحریر: حامد کمال الدین پچھلے دنوں ایک ٹویٹ میرے یہاں سے  ہو۔۔۔
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر
Featured-
ثقافت- خواتين
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر اجالا عثمان انٹرنیٹ سے لی گئی ایک تحریر جو ہمیں ا۔۔۔
غامدى اور عصر حاضر ميں قتال
باطل- فرقے
اعتزال
ادارہ
ایک فیس بکی بھائی نے غامدی صاحب کی جہاد کے موضوع پر ویڈیو کا ایک لنک دے کر درخواست کی تھی کہ میں اس ویڈیو کو ۔۔۔
زیادتی زیادتی میں فرق ہے
باطل- فرقے
احوال- وقائع
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ایک بڑی خلقت واضح واضح اشیاء میں بھی فرق کرنے کی روادار نہیں۔ مگر تعجب ہ۔۔۔
دین پر کسی کا اجارہ نہ ہونا.. تحریف اور من مانی کےلیے لائسنس؟
باطل- كشمكش
حامد كمال الدين
تحریر: حامد کمال الدین کہتا ہے میں اوپن ایئر میں کیمروں کے آگے جنازے کی اگلی صف کے اندر ۔۔۔
اب اس کےلیے اہلِ دین آپس میں الجھیں!؟
احوال-
باطل- شخصيات و انجمنيں
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ’’تنگ نظری‘‘ کی ایک تعریف یہ ہو سکتی ہے کہ: ایک چیز جس کی دین میں گنجائش۔۔۔
شرک کے تہواروں پر مبارکباد دینے والے حضرات کے دلائل، ایک مختصر جائزہ
باطل- اديان
شیخ خباب بن مروان الحمد
شرک کے تہواروں پر مبارکباد دینے والے حضرات کے دلائل، ایک مختصر جائزہ تحریر: شیخ خباب بن مروان ا۔۔۔
دیوالی کی مٹھائی
باطل- اديان
حامد كمال الدين
دیوالی کی مٹھائی تحریر: سرفراز فیضی(داعی: صوبائی جمعیت اہل حدیث ممبئی ) *سوال*: کیا دیوالی کی مبارک باد دینا ۔۔۔
بائیکاٹ کا ہتھیار.. اور قومی یکسوئی کا فقدان
احوال-
باطل- كشمكش
تنقیحات-
حامد كمال الدين
بائیکاٹ کا ہتھیار.. اور قومی یکسوئی کا فقدان ہر بار جب کسی دردمند کی جانب سے مسلم عوام کو بائیکاٹ کا ۔۔۔
ديگر آرٹیکلز
Featured-
باطل- جدال
حامد كمال الدين
کچھ ’مسلم‘ معترضینِ اسلام! تحریر: حامد کمال الدین پچھلے دنوں ایک ٹویٹ میرے یہاں سے  ہو۔۔۔
اصول- منہج
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
پراپیگنڈہ وار propaganda war میں سیگ منٹیشن segmentation (جزء کاری) ناگزیر ہوتی ہے۔ یعنی معاملے کو ای۔۔۔
بازيافت-
ادارہ
ہجرت کے پندرہ سو سال بعد! حافظ یوسف سراج کون مانے؟ کسے یقیں آئے؟ وہ چار قدم تاریخِ ان۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
میرے اسلام پسندو! پوزیشنیں بانٹ کر کھیلو؛ اور چال لمبی تحریر: حامد کمال الدین یہ درست ہے کہ۔۔۔
احوال- امت اسلام
ذيشان وڑائچ
ہمارے کچھ نوجوان طیب اردگان کے بارے میں عجیب و غریب الجھن کے شکار ہیں۔ کوئی پوچھ رہا ہے کہ۔۔۔
احوال- امت اسلام
حامد كمال الدين
’’سلفیوں‘‘ کے ساتھ تھوڑی زیادتی ہو رہی ہے!    عرب داعی محترم ابو بصیر طرطوسی کے ساتھ بہت م۔۔۔
اصول- عقيدہ
اداریہ-
حامد كمال الدين
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار..  اور امت کا طائفہ منصورہ حالات کو سرسری انداز میں پڑھنا... واقعات م۔۔۔
احوال-
اصول- منہج
راہنمائى-
حامد كمال الدين
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز تحریر: حامد کمال الدین میری نظر میں، اس۔۔۔
Featured-
ثقافت- خواتين
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر اجالا عثمان انٹرنیٹ سے لی گئی ایک تحریر جو ہمیں ا۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
"نبوی منہج" سے متعلق ایک مغالطہ کا ازالہ حامد کمال الدین ایک تحریکی عمل سے متعلق "نبوی منہج۔۔۔
متفرق-
ادارہ
پطرس کے ’’کتے‘‘ کے بعد! تحریر: ابو بکر قدوسی مصنف کی اجازت کے بغیر شائع کی جانے والی ای۔۔۔
باطل- فرقے
اعتزال
ادارہ
ایک فیس بکی بھائی نے غامدی صاحب کی جہاد کے موضوع پر ویڈیو کا ایک لنک دے کر درخواست کی تھی کہ میں اس ویڈیو کو ۔۔۔
باطل- فرقے
احوال- وقائع
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ایک بڑی خلقت واضح واضح اشیاء میں بھی فرق کرنے کی روادار نہیں۔ مگر تعجب ہ۔۔۔
باطل- كشمكش
حامد كمال الدين
تحریر: حامد کمال الدین کہتا ہے میں اوپن ایئر میں کیمروں کے آگے جنازے کی اگلی صف کے اندر ۔۔۔
احوال-
باطل- شخصيات و انجمنيں
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ’’تنگ نظری‘‘ کی ایک تعریف یہ ہو سکتی ہے کہ: ایک چیز جس کی دین میں گنجائش۔۔۔
جہاد- مزاحمت
احوال- امت اسلام
حامد كمال الدين
کشمیر کےلیے چند کلمات حامد کمال الدین برصغیر پاک و ہند میں ملتِ شرک کے ساتھ ہمارا ایک سٹرٹیجک معرکہ ۔۔۔
ثقافت- رواج و رجحانات
ذيشان وڑائچ
میرے ایک معزز دوست نے ویلینٹائن ڈے کے حوالے سے ایک پوسٹ پیش کی ہے۔ پوسٹ شروع ہوتی ہے اس جملے سے"ویلنٹائن ۔۔۔
بازيافت- تاريخ
ادارہ
علاء الدین خلجی اور رانی پدماوتی تحریر: محمد فہد  حارث دوست نے بتایا کہ بھارت نے ہندو۔۔۔
کیٹیگری
Featured
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
امت اسلام
ذيشان وڑائچ
امت اسلام
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
منہج
حامد كمال الدين
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
ادارہ
تاريخ
ادارہ
سلف و مشاہير
مہتاب عزيز
مزيد ۔۔۔
باطل
جدال
حامد كمال الدين
فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فرقےاعتزال
ادارہ
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
خواتين
ادارہ
رواج و رجحانات
ذيشان وڑائچ
معاشرہ
عرفان شكور
مزيد ۔۔۔
جہاد
مزاحمت
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ابن علی
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
ادارہ
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز