عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Friday, June 5,2020 | 1441, شَوّال 12
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
EmanKaSabaq آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
يَا أَيُّهَا الْإِنسَانُ مَا غَرَّكَ بِرَبِّكَ الْكَرِيمِِ(1)
:عنوان

:کیٹیگری
حامد كمال الدين :مصنف

يَا أَيُّهَا الْإِنسَانُ

مَا غَرَّكَ بِرَبِّكَ الْكَرِيمِِ(1)

 

ملائکہ کا خیال تھا ہمارا پروردگار جو بھی تخلیق کرنے جارہا ہے، ہم سے بہتر آخر کیا چیز تخلیق کرے گا! مگر کیا دیکھتے ہیں، پروردگار آدم کو پیدا کر لیتا ہے تو احکامات جاری ہوتے ہیں: فرشتے اس کو سجدہ کریں! جی ہاں، سجدہ!!! اب فرشتوں نے جانا کہ یہ ’علم‘ اور ’معرفت‘ ہے جس کے دم سے خاک میں یہ جوہر آچکا ہے کہ ایک ایک فرشتہ اس کے آگے سجدۂ تعظیمی بجا لائے گا!

پھر جب آدم گناہ کر بیٹھا تو فرشتوں کو شاید ایک بار پھر لگا کہ خاک کے پتلے کی یہ فضیلت جو ’علم‘ نے اس کو بے تحاشا دلوا رکھی تھی اب ہمیشہ کیلئے جاتی رہی! مگر فرشتوں نے ’توبہ‘ کے کرشمے تو ابھی دیکھے ہی نہ تھے جو مٹی کی اس مخلوق کو ربِ کریم کی جانب سے بخش دیے گئے! ’توبہ‘ عبودیت کی وہ خاص صورت ٹھہری جو آدم کے وجود میں کمال حسن کے ساتھ اپنا اظہار کررہی تھی اور خدا کی رضا و خوشنودی کو آدم کے حق میں بدرجۂ اتم بحال کرا لائی تھی! تب فرشتوں نے جانا کہ کیچڑ سے بنی اس مخلوق کے ساتھ خدا کا کوئی خاص ہی معاملہ ہے!

ذرا غور کرو، انسان زمین پر ابھی اترا نہیں کہ اس کی تعیناتی یہاں پہلے ہوجاتی ہے! فرمایا: إِنِّي جَاعِلٌ فِي الأَرْضِ خَلِيفَةً(2)۔ بلکہ اس کے پیدا ہونے سے پہلے اس کی تعیناتی ہوجاتی ہے۔ اِس کیلئے منصب پہلے پیدا کیا جاتا ہے اور یہ اس کے بعد!

خدا نے آدم کو ’علم‘ کی دولت سے سرفراز کیا تو مخلوقات اس کے رُوبرو لائی گئیں۔ تب خدا نے ’وَنَحنُ(3) کے دعویدار بھی ’اِنبِئُونِی(4) کی پیشی پر حاضر کر لئے۔’وَعَلَّمَ(5) کی شہادت البتہ ان سے روپوش رکھی اور عین وقت پر ہی بھری کچہری میں سامنے آنے دی۔ تب ’دعووں‘ کے سر نیچے ہوگئے اور ’اعترافِ حق‘ سامنے آگیا! آخر ’مرتبہ وفضیلت‘ کا فیصلہ صادر ہوا اور فرشتوں کی دنیا میں ’اسجدوا(6) کی منادی کرائی گئی۔ ’ونحن(3) کہہ بیٹھنے والوں نے ’لاعلم لنا(7) کے ظرف میں ’اعتذار‘ کے پانی سے وضو کیا اور ’رضا وتسلیم‘ کی صورت پاکیزگی پائی۔ مگر ابلیس کہ ذات کا خبیث تھا، الگ تھلگ رہا۔ اس کو ’اعتذار‘ کی پاکیزگی کہاں نصیب ہوتی کہ ’اعتراض‘ کی نجاست اٹھائے پھرتا تھا؟! یہ نجاستِ عین تھی جو کسی دھونے سے نہیں جاتی!

اب جب نظام ہستی میں کمالِ آدم کی یہ حیثیت طے کرادی گئی، تو ضروری تھا کہ ’اسجدوا(6) کے چہرے پر عجز و انکساری کا ایک تمغہ بھی سجا دیا جائے۔ اب آدم سے گناہ سرزد ہوتا ہے تاکہ ’توبہ‘ کے نتیجے میں اس کی جبین پر عبودیت کی ذلت ایک تا ابد نشان کی طرح بیٹھ جائے!

آدم! تیرا کھایا ہوا وہ لقمہ تجھے اگر یونہی معاف کردیا جاتا تو تیرے حاسد کہتے: ایک حرص کی ماری ہوئی مخلوق جس کو ایک پیڑ پہ پھل دیکھ کر یارائے ضبط نہ رہا، کیونکر سب پر فضیلت پاگئی! تجھے جنت میں ہی چھوڑ دیا گیا ہوتا تو بلندیوں کے مسافر کیونکر اپنا آپ بتاتے اور عظیم نفوس کے مالک کیونکر جانے جاتے؟! ’کیا کوئی ہے جو مانگے اور میں اس کو دوں‘ کی منادیِ نیم شب اِس تسلسل کے ساتھ پھر کیونکر ہوتی؟! ’روزے دار کے منہ کی بو‘ عرش والے کے ہاں اپنی قدر کیونکر پاتی؟!

آدم! جنت میں تیرا ہنسنا تیرا مسئلہ تھا یہاں تیرا توبہ کے آنسو رونا اب ہمارا مسئلہ! اس شخص کو کیا پروا جو میرے جلال کے آگے مات کھا جائے اور پھر میرا فضل اس کی سب تلافی کردے! میری بخشی ہوئی خلعت فاخرہ، انکساری کے بدن پر ہی سجنے کیلئے تو ہے!کوئی مجھے ڈھونڈے تو ان دلوں کے آس پاس جو میری خاطر ٹوٹے ہوں!

وہ ایک لقمہ جو کسی وقت کھا لیا گیا تھا، برابر اپنا اثر کرتا رہا یہاں تک کہ اِس کی اولاد میں بیماری کا اثر صاف دیکھا جانے لگا۔ تب اُس لطیف اور خبیر نے اطبائے وجود کو اپنے یہاں سے وہ تریاق دے کر بھیجا جس پر فَلَا يَضِلُّ وَلَا يَشْقَىٰ(8) کی دائمی مہر تھی! ان طبیبوں نے اِن کو نہایت خوب ’پرہیز‘ بتائے۔ قوت کی بحالی کیلئے ’احکامات‘ کے کامیاب ترین اکسیر پلائے۔’توبہ وانابت‘ کے عمل سے اِن کے ہاں جمع شدہ سب فاسد مادوں سے ان کو پاکیزگی دلائی۔ تب ہر سمت تندرستی کا دور دورہ ہوا!

ارے اے نادان جس نے شفایاب ہونے کے یہ سب مواقع کھو ڈالے، جس نے انبیاءکے بتائے ہوئے کسی پرہیز کو مان کر دیا اور نہ نفس میں بیٹھے غلیظ مادوں سے پاک ہونے کی ’تکلیف‘ گوارا کی.. خاطر جمع رکھ، تباہی آیا ہی چاہتی ہے! یہ مرض جس کو تو یوں پوس پوس کر رکھتا رہا اِس کے ہاتھوں تو سو بار مرے گا مگر تجھے موت نہ آئے گی اس حال میں کہ موت پانا تیری سب سے بڑی خواہش ہوگی! کیا ہی بہتر تھا تو خدا کے فرستادہ ان طبیبوں سے علاج کرا لیتااور یہ ہلکی سی تکلیف جو تجھ پر گراں گزرتی ہے برداشت کر لیتا! تب ہزارہا نفیس لذتوں اور خواہشوں سے ہمیشہ ہمیشہ لطف اندوز ہوتا رہتا ! کون تجھے وہاں منع کرنے آتا؟! مگر جس گھٹیا خواہش کے بخار میں تو اس وقت مبتلا ہے اس نے سب سے بڑھ کر تیری بصیرت کو ہی متاثر کر رکھا ہے، جس کے باعث تجھے ’عقلمندی‘ اب یہ نظر آتی ہے کہ خدائے کائنات کے ایک نہایت عظیم وعدے کو ’نقد‘ کے شوق میں تو چند ٹکوں کے عوض بیچ ڈالے! وائے عاقبت نا اندیشی! ایک ساعت صبر نہ کرسکا اور ابد کی ذلت اور عذاب سہنے پر کس شدت کے ساتھ تیار ہے!

جب تم کسی شخص کو دیکھو کہ وہ نفیس کو خسیس کے بدلے بیچ رہا ہے اور عظیم چیز دے کر ایک حقیر چیز خرید رہا ہے، اور اس پر مارے خوشی کے بے قابو ہوا جاتا ہے، تو جان لو احمق یہی ہے!

 

٭٭٭٭٭

 

”ابن آدم! اگر تو زمین برابر خطائیں لے کر بھی میرے پاس آئے اور مجھ سے ملے اس حالت میں کہ تو نے میرے ساتھ کچھ شرک نہ کیا ہو، تو میں اتنی ہی مغفرت کے ساتھ تیرا سامنا کروں“

چونکہ ’حقیقتِ عبدیت‘ آدمؑ کے ہاں برقرار تھی، لہٰذا گناہ اس کیلئے باعثِ قدح نہ ہوا۔ مالک نے جب یہ دیکھا کہ گناہ سرزد ہوتے وقت اُس کے بندے کا مقصد اُس کی مخالفت کرنا نہ تھا، اور نہ اِس کو مالک کی حکمت اور دانش پر، کہ کیوں اُس نے وہ حکم دیا تھا، کچھ اعتراض تھا، لہٰذا اُس نے اِس گناہگار کو اب یہ علم عطا کردیا کہ کس طرح یہ مالک کے سامنے اپنا عذر رکھے اور آئندہ بھی قصور ہوجائے تو کس طرح مالک کو منالیا کرے! اس سے بڑھ کر بھی صاحبو کوئی ہنر چاہیے؟!!!!

فَتَلَقَّى آدَمُ مِن رَّبِّهِ كَلِمَاتٍ فَتَابَ عَلَيْهِ إِنَّهُ هُوَ التَّوَّابُ الرَّحِيمُ!!!(9)

زمین پر تو اِس مخلوق کو ویسے ہی آناتھا کہ اِس کی تعیناتی تخلیق سے بھی پہلے اسی زمین پر ہو چکی تھی، مگر توبہ سے دھل جانے کے بعد یہ مخلوق اپنے مالک کی نظر میں پھر سے بھلی ہوگئی تھی!!!

پس گناہ اس کیلئے وہ نقصان دہ نہیں، جو حالتِ عبدیت میں بھول چوک سے اور شیطان کے بہکاوے سے اور نفس کے بے قابو ہوجانے سے کسی وقت سرزد ہوجائے اور پھر یہ اس پر تائب ہو کر مالک کی جانب پلٹ آئے، اور اپنے اس قصور پر مالک کے سامنے اور بھی ذلت محسوس کرے۔گناہ جو اس کو مروائے گا، وہی ہے جس کے کرنے والے کے ہاں حالتِ بندگی ہی نہ پائی گئی ہو۔مالک کا مقام ہی جس کے ہاں متعین نہ ہوا ہو۔ مالک کے سامنے اپنی حیثیت ہی نہ جانی گئی ہو۔ جواب دہی کی فکر ہی نہ پائی گئی ہو۔اور ندامت کا خیال بھی اس کو اوپرا لگتا ہو!

ابن آدم کے اجزائے ترکیبی میں ’گناہوں کا سرزد ہوجانا‘ شامل نہ ہوتا، تو فرشتوں سے سجدے کروانے والی اس مخلوق کا نخرہ ساتویں آسمان سے باتیں کرتا! خاک کی اس مخلوق کو خاک پر رکھنے کیلئے ضروری تھا کہ اس سے گناہ ہوجایا کریں اور پھر یہ خدا سے اپنے گناہوں کی بخشش مانگا کرے۔ بخشش کی التجائیں کرتے ہوئے سجدوں میں پڑا یہ اِسی مٹی پہ ماتھا رگڑے اور ہوسکے تو اسی کو آنسوؤں سے تر کرے!

پس ’گناہ کر بیٹھنا‘ اگر اِس کی ترکیب میں نہ ہوتا تو ’توبہ کی ذلت‘ جو مالک کی نگاہ میں اس کا نہایت قیمتی زیور ہے، اس کے ماتھے پر نہ سجتا! اس کو وہ انکساری نصیب نہ ہوتی جو مالک کے آگے اس کی کمر دہری کروا دیتی ہے!

صاحبو! خدا کے آگے ذلت ایسی عزت کہیں نہیں پائی جاسکتی! خدا کے آگے عاجزی ایسی سربلندی کہیں ممکن نہیں! جو اِس نفس کو آرام دینا چاہے، اُسے چاہیے اِسے خدا کی خاطر تھکائے! جو اِسے خوشیوں سے لاد دینا چاہے، اُسے چاہیے اِسے خدا کی خاطر غم اور پریشانیاں اٹھوائے!اسے سیر کرنے کی بہترین صورت یہی ہے کہ کوئی آج اسے خدا کی خاطر بھوکا رکھے!اس کو بے خوف رکھنے کی اس سے بہتر کوئی صورت نہیں کہ آج وہ اِسے خوب ڈرا کر رکھے۔خلد میں اِس کے اُنس پانے کا اس سے بہتر کوئی طریقہ نہیں کہ آج اِس کا کہیں دل نہ لگے، سوائے اپنے خالق اور اپنے فاطر ہی کے ساتھ! اِس کے زندگی پانے کی اس سے بہتر کوئی صورت نہیں کہ آج یہ موت کی تلاش میں پھرے!

مَوتُ النفوسِ حیاتُها .... من شاءَ اَن یحیا، یموت!(10)

 

(استفادہ از کتاب الفوائد مؤلفہ ابن القیمؒ، ص 64-67)


(1) (الانفطار: 6) ”اے انسان! آخر کس چیز نے تجھے فریب میں ڈال دیا تیرے پروردگار کی بابت، جو کرم کامالک ہے؟!“

(2) إِنِّي جَاعِلٌ فِي الأَرْضِ خَلِيفَةً ”بے شک میں زمین میں ایک خلیفہ پیدا کرنے والا ہوں“

(3) وَنَحنُ ”اور ہم“ (مراد ہے فرشتوں کا آدم کی تخلیق کے وقت ’اپنی‘ اس تسبح و تقدیس کا ذکر کرنا جو وہ خدا کی تعظیم میں صبح شام کرتے ہیں)

(4)اِنبِئُونِی ”مجھے بتاؤ تو“ (مراد ہے فرشتوں کاامتحان کرنے کیلئے خدا کا ان کو یہ کہنا کہ مجھے ان چیزوں کے نام تو بتاؤ)

(5) وَعَلَّمَ ”اور اُس نے سکھا دیا“ (مراد ہے اُس نے آدم کو ان ناموں کا علم دے دیا)

(6) اسجدوا ”سجدہ کرو“ (مراد ہے خدا کا فرشتوں کو حکم دینا کہ ’سجدہ کرو آدم کو‘)

(7) لاعلم لنا ”نہیں ہمیں کوئی علم“ (مردا ہے فرشتوں کا یہ کہنا: ’نہیں ہمیں کوئی علم مگر وہی جو تو نے ہمیں سکھایا‘)

(8) ”نہ وہ بھٹکے گا اور نہ وہ تباہی میں پڑے گا“ (اشارہ ہے سورہ طہ آیت 123 کے ان الفاظ کی طرف: فَإِمَّا يَأْتِيَنَّكُم مِّنِّي هُدًى فَمَنِ اتَّبَعَ هُدَايَ فَلَا يَضِلُّ وَلَا يَشْقَى ”تو پھر جب آئے گی تمہارے پاس میری جانب سے ایک ہدایت، تو جو بھی میری ہدایت کی پیروی کرے گا وہ نہ تو بھٹکے گا اور نہ تباہی میں پڑے گا“)

(9) البقرۃ: 37 ”تب آدم نے اپنے رب سے کچھ کلمات کا القا پایا، تب پروردگار نے اس کی جانب رجوع فرمایا۔ بے شک وہ تو ہے ہی تواب اور رحیم“!

(10) نفوس کا موت طلب کرنا دراصل ان کا زندگی پانا ہے۔ جو چاہے کہ زندگی کا لطف پائے اسے چاہیے وہ مرنا قبول کرے!

 

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
ديگر آرٹیکلز
Featured-
احوال- وقائع
باطل- فرقے
حامد كمال الدين
شام میں حضرت عمر بن عبدالعزیزؒ کے مدفن کی بےحرمتی کا افسوسناک واقعہ اغلباً صحیح ہے حامد کمال الد۔۔۔
جہاد- دعوت
عرفان شكور
كامياب داعيوں كا منہج از :ڈاكٹرمحمد بن ابراہيم الحمد جامعہ قصيم (سعودى عرب) ضرورى نہيں۔۔۔۔ ·   ضرور۔۔۔
باطل- فرقے
Featured-
حامد كمال الدين
"المورد".. ایک متوازی دین حامد کمال الدین اصحاب المورد کے ہاں "کتاب" سے اگر عین وہ مراد نہیں۔۔۔
جہاد-
احوال-
Featured-
حامد كمال الدين
’دوحہ‘ اہل اسلام کی ’جنیوا‘ سے بڑی جیت، ان شاء اللہ حامد کمال الدین ہمیں ’’زیادہ خوش نہ ہونے۔۔۔
Featured-
حامد كمال الدين
اسلامی تحریک کا ’’مابعد تنظیمات‘‘ عہد؟ Post-organizations Era of the Islamic Movement یہ عن۔۔۔
حامد كمال الدين
باطل فرقوں کےلیے گنجائش پیدا کرواتے، دانش کے کچھ مغالطے   کچھ علمی چیزیں مانند (’’لازم المذھب لیس بمذھب‘۔۔۔
باطل- فرقے
حامد كمال الدين
شیعہ سٹوڈنٹ کے ساتھ دوستی، شادی بیاہ   سوال: السلام علیکم سر۔ یونیورسٹی میں ا۔۔۔
بازيافت- سلف و مشاہير
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
امارتِ حضرت معاویہؓ، مابین خلافت و ملوکیت نوٹ: تحریر کا عنوان ہمارا دیا ہوا ہے۔ از کلام ابن ت۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
سنت کے ساتھ بدعت کا ایک گونہ خلط... اور "فقہِ موازنات" حامد کمال الدین مغرب کے اٹھائے ہوئے ا۔۔۔
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
حامد كمال الدين
"انسان دیوتا" کے حق میں پاپ! حامد کمال الدین دین میں طعن کر لو، جیسے مرضی دین کے ثوابت ۔۔۔
بازيافت-
حامد كمال الدين
تاریخِ خلفاء سے متعلق نزاعات.. اور مدرسہ اہل الأثر حامد کمال الدین "تاریخِ خلفاء" کے تعلق س۔۔۔
باطل- اديان
حامد كمال الدين
ریاستی حقوق؛ قادیانیوں کا مسئلہ فی الحال آئین کے ساتھ حامد کمال الدین اعتراض: اسلامی۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
لفظ  "شریعت" اور "فقہ" ہم استعمال interchangeable    ہو سکتے ہیں ۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
ماتریدی-سلفی نزاع، یہاں کے مسلمانوں کو ایک نئی آزمائش میں ڈالنا حامد کمال الدین ایک اشع۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
منہجِ سلف کے احیاء کی تحریک میں ’مارٹن لوتھر‘ تلاش کرنا! حامد کمال الدین کیا کوئی وجہ ہے کہ۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
      کشمیر کاز، قومی استحکام، پختہ اندازِ فکر کی ضرورت حامد ۔۔۔
تنقیحات-
مشكوة وحى- علوم حديث
حامد كمال الدين
اناڑی ہاتھ درایت! صحیح مسلم کی ایک حدیث پر اٹھائے گئے اشکال کے ضمن میں حامد کمال الدین ۔۔۔
راہنمائى-
حامد كمال الدين
(فقه) عشرۃ ذوالحج اور ایامِ تشریق میں کہی جانے والی تکبیرات ابن قدامہ مقدسی رحمہ اللہ کے متن سے۔۔۔
کیٹیگری
Featured
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
وقائع
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
سلف و مشاہير
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
حامد كمال الدين
ادارہ
مزيد ۔۔۔
باطل
فرقے
حامد كمال الدين
فرقے
حامد كمال الدين
فرقے
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
معاشرہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
خواتين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
جہاد
دعوت
عرفان شكور
حامد كمال الدين
مزاحمت
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم حديث
حامد كمال الدين
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز