عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Saturday, February 22,2020 | 1441, جُمادى الآخرة 27
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
2014-04 آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
نسلی اکائیوں اور علاقائی رہن سہن کا تحفظ: "جماعۃ المسلمین" بہ موازنہ ’ماڈرن سٹیٹ‘
:عنوان

اندازہ تو کیجئے: کسی بند کمرے میں دو مشتبہ کرداروں (مانند بھٹو و مجیب) کے دستخط ایک لمحے کے اندر کروڑوں انسانوں کی "شناخت" بدل دیں؟! ایسی ناپائیدار اور ناقابل بھروسہ چیز؛ جو کسی ظالم کی ایک جنبشِ قلم کی مار ہو

. اصولمنہج :کیٹیگری
حامد كمال الدين :مصنف

Text Box: 104ذیلی مبحث1[1]

نسلی اکائیوں اور علاقائی رہن سہن کا تحفظ

’’جماعۃ المسلمین‘‘ بہ موازنہ ’ماڈرن سٹیٹ‘

’’خلافت‘‘ کے خلاف ایک بددیانت پراپیگنڈہ، اور اس کا بطلان:

’’قبیلوں‘‘ اور ’’شاخوں‘‘ (شعوب)، نیز زبانوں اور اقالیم (طبعی خطوں) کا لحاظ کیا جانا شریعت کے بےشمار شواہد سے ثابت ہے۔

علاقائی رہن سہن کا تحفظ ہماری ’’الجماعۃ‘‘ کی تاریخ میں ایک معلوم حقیقت ہے۔

قابلِ ذکر بات یہ ہے کہ ’’جماعۃ المسلمین‘‘ اپنی فطرت اور مزاج میں ایک ایسی خوبصورت، رحمدل اور مسحورکن وحدت ہے کہ  وہ سب مصائب جو ’نیشن سٹیٹ‘ والی وحدت پیدا کرکے دیتی ہے یہاں کبھی پیش ہی نہیں آئے۔

البتہ داعیانِ ’نیشن سٹیٹ‘ کو کیا سوجھی، جس چیز (طبعی رشتوں اور علاقائی رہن سہن) کو قتل کرتے کرتے آج یہ ناپید کردینے کے قریب ہیں اُس کے تحفظ کا واسطہ دے کر یہ اپنی اس بےرحم ’ماڈرن سٹیٹ‘ کے کیس کو ثابت اور ہماری ’’خلافت‘‘ کو ناثابت کرنے لگے! یہ ایک الٹی گنگا ہے جسے ہمارے بہت سے لوگ سمجھنے سے قاصر ہو رہے ہیں۔ اللہ کا شکر ہے اس میدان میں بھی ہمارا ہی پلڑا بھاری ہے؛ بلکہ فریقِ مخالف اِسی ایک پوائنٹ پر ہم سے مات کھا سکتا ہے۔ یہ نہ صرف انسانیت بلکہ انسانی رشتوں اور انسانی جذبوں کے بھی قاتل ہیں؛ البتہ دجل میں ان کا جواب نہیں۔

اسی کیس کو ’مذہبی‘ سپورٹ دینے کےلیے’’المورد‘‘کے مفتیانِ کرام ٹی وی چینلز پر طریقے طریقے سے اپنا وہ مدعا بیان کرنے  لگے ہوتے ہیں کہ: اصل فساد مملکتِ پاکستان کے اُس خمیر اور اُس فارمولے میں ہے جو ’’دین‘‘ کو ’’مملکت‘‘ کی بنیاد بنانے سے اٹھایا گیا تھا؛ اور پھر ’بنگلہ دیش‘ کی مثال کو گھماگھما کر اپنے دعوے کے حق میں ’دلیلِ قطعی‘ کے طور پر پیش کرتے ہیں! اس پر؛ ان کا ٹیپ کا مصرع یہ ہوتا ہے کہ ’ریاست‘ کی بنیاد تو زبان اور علاقائی رہن سہن وغیرہ ہی ہوسکتا ہے؛ اس کی بنیاد ’مذہب‘ کو بنانا تو سراسر نادانی ہے؛ شریعت نے کب یہ کہا ہے کہ ریاست کی بنیاد ’مذہب‘ ہو؟!

پھر یہاں سے ان کا رخ ’’خلافت‘‘ کی طرف ہوجاتا ہے جوکہ ان کی نظر میں اور بھی بڑی دیوانگی ہے؛ باربار سوال اٹھاتے ہیں کہ کیسے آپ مراکش سے انڈونیشیا تک کو ایک کرلیں گے جہاں درجنوں زبانیں اور ڈھیروں کلچر ہیں! (’درجنوں زبانوں اور ڈھیروں کلچرز‘ کو ’ایک ریاست‘ کی قید ڈالنے پر کاش ہماری ’’ٖخلافت‘‘ یا ’’پاکستان کے فارمولے‘‘[2]   کو معاف کرکے فی الحال  اِن حضرات کا رخ ’’بھارت‘‘ کی طرف ہوجائے جہاں ملک کے ایک طرف کا باشندہ دوسری طرف کے باشندے کی بات سمجھ تک نہیں سکتا؛ لیکن یہ تسلسل کے ساتھ ’’پاکستان‘‘ اور ’’خلافت‘‘ ہی کو اپنی مشقِ سخن کےلیے منتخب فرماتے ہیں! البتہ ’ذہانت‘ سے کام لیتے ہوئے ’بنگالیوں‘ کی مثال دینے کے بعد اپنی بات ’نامکمل‘ چھوڑ دیتے ہیں! ظاہر ہے بلوچ کو پنجابی سے جوڑنے والی کوئی گوند ’مذہب‘ سے بڑھ کر مضبوط نہیں ہے؛ اس گوند کا استعمال متروک ٹھہرا دیں  تو یہ رشتہ خود ہی قابل ترس ہوجاتا ہے)۔[3]

*****

طبعی رشتے، علاقائی رنگ، زبانوں کا تنوع (اخْتِلَافُ أَلْسِنَتِكُمْ وَأَلْوَانِكُمْ)... اور ہماری ’’الجماعۃ‘‘؛ یہ ایک دوسرے کےلیے ہی تو بنے ہیں! اِس تعددِ اجناس کے بغیر ’’الجماعۃ‘‘ کا کیا لطف؟! یہ تو ایک عالمی کمیونٹی ہے اور روئے زمین پر ’’مل کر‘‘ خدا کی عبادت کرتی ہے؛ اس کو رنگوں اور زبانوں کا اختلاف کیا کہے گا؛ یہی تو اس کی خوبصورتی ہے!

طبعی رشتوں اور قدرتی جذبوں کو اسلام کس طرح اپنی آغوش فراہم کرتاہے اور ان کو گزند پہنچانے سے کس قدر دور ہے، ہماری ’’الجماعۃ‘‘ کی تاریخ ان خوبصورت حقیقتوں سے لبریز ہے۔ اس پر تعلیق 12 میں کچھ بات ہو چکی۔ امیر المؤمنین حضرت عمر﷛ کی ہدایات پر والیِ فارس حضرت سعد بن ابی وقاص﷛ نے دو نئے شہر بسائے، کوفہ اور بصرہ (جس کا ذکر آگے  ابن تیمیہ کے متن میں بھی آر ہا ہے)،  تو ’’مسجد‘‘ اور ’’دار الامارۃ‘‘ کو مرکز بنا کر اردگرد کی ہفتگانہ تقسیم کی گئی اور ہر حصہ قبائل کے ایک ایک مجموعہ  کو الاٹ کیا گیا۔ یہ دونوں شہر دراصل مجاہدین کی رہائشی چھاؤنیاں تھیں (حضرت عمر﷛ کا اجتہاد کہ ہر مجاہد کے چھٹی پر گھر جانے اور واپس آنے میں امت کا وقت ضائع ہوتا ہے، نیز آدمی کے گھر سے دور رہنے میں کچھ مفاسد ہیں جبکہ جہاد اس امت پر فرض ہے؛ چنانچہ کوفہ و بصرہ کی یہی قبائلی تقسیم (جو پیچھے اُن کے اپنے اپنے قبیلے یا خطے سے وابستہ تھی) آگے جہاد اور اس کی تیاری میں فائدہ دیتی تھی۔ تاریخ طبری میں ان قبیلوں کی ترتیب تک درج ہے۔ کہا جاتا ہے حضرت معاویہؓ کے دور تک کوفہ و بصرہ کی یہی تقسیم رہی۔ یہاں تک کہ زیاد نے اس سباعی تقسیم کو رباعی تقسیم میں بدل دیا جس سے اُس کا مقصد بنو امیہ کو ناپسند کچھ قبائل کو بکھیرنا تھا۔  ہر اقلیم کی وحدت اور انفرادیت کو مختلف سطحوں پر برقرار رکھنا خلافت میں ایک عمومی تسلسل کے طور پر ہمیں نظر آتا ہے۔

خلافت ایک ’’وسیع تر وحدت‘‘ اور ایسے ’’توازن‘‘ کا نام تھا جس کے اندر یہ سب ’’طبعی‘‘رشتے پنپتے بھی خوب تھے البتہ ’عصبیتیں‘ بھی نہ بنتے تھے۔ کیوں نہ ہوتا؛ کہ یہ خدا کے دین پر قائم ’’الجماعۃ‘‘ تھی جو انسانی فطرت کو سب سے زیادہ سمجھتا اور سب سے زیادہ آسودہ کرتا ہے۔ ہم یہ نہیں کہتے کہ ہماری اسلامی زندگی میں ’عصبیتوں‘ نے کبھی سر نہیں اٹھایا، مگر ایک بڑی سطح پر اس کی مثال ایسے ہی رہی جیسے گھر میں دو بھائیوں اور ان کی اولادوں کے مابین لڑائی چھڑ جائے اور کسی وقت مرنے مرانے تک نوبت چلی جائے مگر ’’رشتوں‘‘ کی مٹھاس پھر کسی وقت عود کر آئے! ہماری یہ خلافت سوا ہزار سال تک قائم رہی، خلافت کے کمزور پڑجانے کے بڑے بڑے طویل عرصوں کے دوران ہماری اسلامی امارتوں(جو بالعموم خلافت سے ایک انتساب رکھتی تھیں) کا فنامنا تاریخ میں نمایاں طور پر سامنے آتا ہے۔ یہ اسلامی امارتیں الگ الگ ’’انتظامی اکائیاں‘‘ ضرور تھیں جو اکثر اوقات ’خودمختار‘ بھی ہوتی تھیں، اس کے باوجو آج کی ’نیشن سٹیٹ‘ کے برعکس وہ وہاں بسنے والے انسانوں کے حق میں ’’تشخص‘‘، ’’وابستگی‘‘، ’’تقسیمِ بنی آدم‘‘ اور ’’شناخت‘‘ کے کسی فلسفے پر قائم نہ تھیں۔  جہاں تک ’’تشخص‘‘، ’’وابستگی‘‘، ’’تقسیمِ بنی آدم‘‘ اور ’’شناخت‘‘  کا تعلق ہے تو  –  ’’دار الاسلام‘‘ اور ’’دارالکفر‘‘ کا فرق برقرار ہونے کے باعث  –   اِن الگ الگ اور انتظامی طور پر خودمختار اکائیوں کے باوجود ’’الجماعۃ‘‘ کا وہ عمومی معنیٰ ہی یہاں پر  برقرار تھا۔ (علاوہ اس بات کے کہ یہ امارتیں ایک مجموعی معنیٰ میں محمدﷺ کی شریعت کے علاوہ کسی قانون سے واقف نہ تھیں)۔

البتہ نہ خلافت میں، اور نہ  ان اسلامی امارتوں کے عہد میں...  کبھی ایسا نہیں ہوا کہ ہم نے قوموں کو بانٹا اور قبیلوں کو کاٹا ہو۔ (اِس ’ماڈرن سٹیٹ‘ والے فنامنا کی طرح) کبھی ہم نے کردوں کو کردوں سے کاٹا ہو اور وہ بیچارے اپنی خونی وحدت کے واسطے دے دے کر ہلکان ہوتے پھر رہے ہوں؛ (اِن کئی کئی ’ماڈرن سٹیٹس‘ میں بٹ کر ’’کرد‘‘ اپنی قومی پہچان کو ہمیشہ کےلیے ختم ہوتا دیکھ رہے ہوں؛ جہاں ان کے ’قومی نصاب‘ پڑھنے والےبچے ایک دن اپنی کرد شناخت کو مکمل طور پر بھول جائیں گے اور جوکہ کردوں کے بڑوں کو اپنی آئندہ نسلوں کےلیے کسی صورت برداشت نہیں؛ اور جوکہ یقینی طور پر ان کا حق ہے)۔ کبھی ہم نے بربروں کو بربروں سے کاٹ کر ان کو پانچ الگ الگ رنگوں کے ’پاسپورٹ‘ تھمائے ہوں۔ پشتون کو پشتون سے، بلوچ کو بلوچ سے، ترک کو ترک سے، بنگالی کو بنگالی سے، بہاری کو بہاری سے،عرب کو عرب اور حبشی کو حبشی سے الگ کرکے ان کے مابین ’سرحدیں‘ کھڑی کی ہوں۔ }فَهَلْ عَسَيْتُمْ إِنْ تَوَلَّيْتُمْ أَنْ تُفْسِدُوا فِي الْأَرْضِ وَتُقَطِّعُوا أَرْحَامَكُمْ  أُولَئِكَ الَّذِينَ لَعَنَهُمُ اللَّهُ فَأَصَمَّهُمْ وَأَعْمَى أَبْصَارَهُمْ (محمد: 22، 23) ’’تو کیا تم سے کچھ بعید ہے کہ تم صاحبِ اقتدار بن جاؤ تو زمین میں فساد برپا کرو اور اپنے رشتے کاٹ ڈالو؟ یہی وہ لوگ ہیں جن پر الله نے لعنت کی ہے پھرانہیں بہرا اوراندھا بھی کر دیا ہے‘‘{ یہ سب کنبے، قبیلے، قومیں، برادریاں ہماری خلافت اور ہماری اسلامی امارتوں کے سائے میں پوری آزادی سے پنپتی رہی ہیں۔

’’رشتوں‘‘ کو جوڑنا اِس دین کے بڑے بڑے اسباق میں آتا ہے؛ اور مسلمانوں نے ہمیشہ اس کی پابندی کی ہے۔ لوگوں کے طبعی میلانات اور قدرتی جذبات کی قدر جتنی ہمارے دین میں ہے اتنی کہیں نہیں ہے۔ علاقائی رسم و رواج (کلچرز) کو صحابہؓ اور ان کے مابعد خلفاء، امراء، فقہاء اور فاتحین نے کبھی نہیں چھیڑا (سوائے جہاں وہ شریعت ہی سے متصادم ہوں)۔

احادیث میں آتا ہے کہ حضرت عائشہؓ نے ایک یتیم انصاری بچی کی پرورش کی اور اس کی شادی کی تو نبیﷺ نے عائشہؓ  کو خود توجہ دلائی کہ یہ اوس اور خزرج ایسے مواقع پر گانابجانا پسند کرنے والے لوگ ہیں  رخصتی کے وقت تم نے دو بچیاں ساتھ کیوں نہ کردیں جو دف پر کم از کم یہ (لوک گانا) ہی گا دیتیں ’’أتیناکم أتیناکم، فَحَیُّونا نُحَیِّیۡکم‘‘۔ یعنی ایک علاقائی رواج کا اعتبار کیا۔

 صحابہؓ نے آدھی دنیا فتح کی، چاہتے تو ’’سنت‘‘ کے نام پر (جیساکہ آج کچھ نادان لوگ کرنے میں لگے ہیں) لوگوں کے علاقائی لباس، رواج، بولیاں، رہن سہن سب تبدیل کروادیتے اور ان کو ایک ہی ’’مدینہ‘‘ کے کلچر پر لے آتے؛مگر صحابہؓ نے ان اقوام کو اِن رنگ برنگ موسموں، کلچروں، بولیوں اور لہجوں کا خوب لطف لینے دیا اور زندگی کو کسی بوریت اور یکسانیت کی جانب ہرگز نہ دھکیلا۔ صرف ایک ’’عربی زبان کے حیرت انگیز پھیلاؤ‘‘ کو آپ اس قاعدہ سے مستثنیٰ کرسکتے ہیں لیکن جن لوگوں کو قرآن سے لطف لینا آتا ہے وہ گواہی دیں گے کہ اِن اقوام کو اِس لطفِ عظیم سے محروم رکھنا ایک بڑا ظلم ہوتا۔

صرف ڈیڑھ سو سال پہلے کی حالت پر نگاہ ڈال لیں؛ کہ جب ’ماڈرن سٹیٹ‘ نام کی یہ بلا ہمارے صحن میں نہیں اتری تھی اور ہماری خلافت اور اسلامی امارتوں کے باقیات ہی اِن خطوں کے اندر برقرار، نیز زمین کی ’’طبعی تقسیم‘‘ ابھی جوں کی توں تھی۔ چھوٹے چھوٹے علاقوں کی زبانیں یہاں اپنی زرخیزی کو پوری طرح برقرار رکھے ہوئے تھیں۔ علاقائی شاعری عروج پر تھی۔ ہر نسل کے لوگ اپنی نسل سے جڑے ہوئے تھے؛ ایک خون کو’کاٹنے‘، اس کا شیرازہ بکھیرنے اور ان کے مابین ’سرحدیں‘ کھڑی کرنے والی کوئی غیرانسانی قوت یہاں نہ تھی۔ ’’انسان‘‘ روئے زمین پر آزادی سے چلتا پھرتا تھا۔  محبتیں قائم؛ مروتیں باقی تھی۔ ہر علاقے اور ہر خطے کے اتنے اتنے مختلف کھیل، اتنی اتنی مختلف دلچسپیاں، اتنی اتنی مختلف عادات، رسوم، معمولات کہ زندگی رنگوں کے تنوع سے بھری ہوئی تھی۔ یہ تھی ہماری طبعی دنیا۔

البتہ ’ماڈرن سٹیٹ‘ اُس خاص عالمی ایجنڈا کو رو بہ عمل لانے کا ذریعہ تھی جس کے پیچھے ایک مخصوص عالمی ٹولہ ہے۔ وہ فری میسونک ٹولہ جو اسلام ہی نہیں انسانیت کے خلاف بھی صدیوں کا بغض پالے ہوئے تھا؛ (صدیوں کا دھتکارا ہوا یہودی دماغ) جو اپنی منافقت کا پردہ اتار دے تو ’’انسان‘‘ کو ہنستا برداشت نہ کرسکے۔ یہاں؛ نسلی رشتوں اور طبعی وحدتوں کو جس کند چھری سے ذبح کیا گیا آج وہ سب کے سامنے ہے؛ اور میرا خیال ہے ’’سو سال‘‘ اپنے نتائج دکھانے کو خردمندوں کےلیے بہت کافی ہے! ’’دین‘‘تو خیر بہت عظیم شےء ہے اور اس سے بڑھ کر ’’شناخت‘‘ تو بھلا کیا ہوسکتی ہے، لیکن اِس ماڈرن درندے نے تو ’’انسان‘‘ کی کوئی بھی شناخت باقی نہ رہنے دی۔  دین کے بعد کوئی شناخت ہوسکتی ہے تو وہ لوگوں کے انساب اور قبائل اور شعوب (شاخیں) ہیں۔  ان کو بھی پوری بےرحمی کے ساتھ کچل ڈالا گیا۔  ایک ایک قبیلے اور ایک ایک طبعی قوم کو کئی کئی ’ماڈرن‘ ڈربوں میں ڈال دیا گیا اور آئے روز اِن ’ڈربوں‘ میں ردوبدل ہوتا رہا۔ انسان کی پہچان کےلیے کیا بچا؟ اس کا وہ ڈربہ!  اب اِس ڈربے کا حال دیکھ لیجئے؛ ’’دین‘‘ تو ایک عظیم چیز ہے اس کو بدلنے کا تو خیر کیا سوال۔ قوم (طبعی معنیٰ کی قوم) ،  قبیلہ  اور نسب کبھی بدلا ہی نہیں جاسکتا (نبیﷺ نے نسب بدلنے والے پر لعنت فرمائی ہے؛ ’’اَنساب‘‘ کا تحفظ کرنے میں اسلام نے حد کردی ہے)۔  البتہ ’ڈربہ‘ ایک لمحے میں بدلا جاسکتا ہے! کیا اس کو ’’شناخت‘‘ کہیں گے جو انسان کے شایانِ شان ہو؟ اندازہ تو کیجئے: کسی بند کمرے میں دو مشتبہ کرداروں (two culprits بھٹو اور مجیب) کے دستخط ایک لمحے کے اندر کروڑوں انسانوں کی ’’شناخت‘‘ بدل دیں؟! ایسی ناپائیدار اور ناقابلِ بھروسہ چیز؛ جو کسی ظالم کی ایک جنبشِ قلم کی مار ہو؟؟! جس کو کوئی بھی عالمی مافیا چند سالوں کی محنت سے راکھ کی طرح اڑا دے؟؟! جس کو کسی سے جوڑنے اور کسی سے توڑنے کےلیے آئے روز ’پلان‘ بنتے پھریں؟؟! ’’شناخت‘‘ کے طور پر یہودی نے ہم سے ہمارا ’’دین‘‘ چھڑوا دیا (کہ بھلا یہ بھی کوئی پہچان ہوتی ہے؟!) ’’خون‘‘ اور ’’نسل‘‘ کو تتربتر کردیا۔ اور  ایسی ایک پہچان دے دی  جس کا پیپر کرنسی کی طرح کوئی اعتبار نہیں؛ لمحوں میں یہ کہیں سے کہیں چلی جائے! اور اِن ہردو کے ’فیصلے‘ کہیں اور ہوں!

رہ گئی زبانیں اور کلچر... تو ہر شخص جانتا ہے اکثر علاقائی زبانیں آج موت و حیات کی کشمکش سے دوچار ہیں؛ بلکہ علاقائی ہی نہیں ا ِس مُفسد فی الارض کے ہاتھوں یہاں کی قومی زبانیں ناپید ہونے لگیں اور اُس اصل ’’جماعۃ‘‘ (global community)  کی زبان ہی یہاں ہر طرف چھانے لگی جو درحقیقت اس پیکیج کی روحِ رواں ہے! جیساکہ ہم نے کہا ’ماڈرن سٹیٹ‘ دراصل ایک خاص کلچر کی نمائندہ تھی؛ یہ خود کچھ نہیں اصل میں تو یہ زمین میں کسی اور ’جماعۃ‘ کی تشکیل کرنے کےلیے ہے۔  اس تہذیب کا سب سے بڑا ہتھیار البتہ منافقت ہے؛ یعنی دکھانا کچھ اور کرنا کچھ اور (hidden agenda)! کیونکہ اس میں مسلم فاتحین والی وہ جرأت اور صاف گوئی مفقود ہے۔ یہ وہ ملت ہے جو ریڈ انڈینز کو کچل دینے کے بعد ہر سال ان کو ’مرغِ رومی‘ (turkey) کا تحفہ دیتی ہے! خاندان کو ریزہ ریزہ کردینے کے بعد ’مدر ڈے‘ اور ’فادر ڈے‘ کا انعقاد کرواتی ہے! اپنے بھاری بھرکم ابلاغی و تعلیمی امکانات کو کام میں لاتے ہوئے علاقائی رہن سہن اور رسم و رواج کو تہس نہس کردینے کے بعد ’لوک کلچرز‘ کے اجڑ جانے کے بین کرتی ہے۔ انساب، قبائل اور اقوام کو ملیامیٹ کردینے کے بعد  لوگوں کو ’’خلافت‘‘ سے ڈراتی ہے کہ اگر یہ قائم ہوگئی تو لوگوں کی ’’علاقائی شناخت‘‘  کا کیا بنے گا! اپنی دیوہیکل ملٹی نیشنلز کھڑی کردینے کے بعد ’آزادانہ تجارت‘ اور ’فری اکانومی‘ کے راگ الاپتی ہے!  واقفانِ حال آپ کو بتائیں گے کہ اِس وقت جتنی ’نیشن سٹیٹس‘ دنیا میں ہیں سب کے ’کانسٹی ٹیوشن‘ قریب قریب ایک دوسرے کا چربہ ہیں۔ یعنی شروع میں ایک ہی دستاویز تیار ہوئی تھی اور پھر تھوڑے ردوبدل کے ساتھ آگے ہر جگہ اُسی کی نقل ہوتی چلی گئی۔ معیشتیں ایک دوسرے کی نقل۔ سیاسی نظام ایک دوسرے کا چربہ۔ تعلیمی نظام ایک دوسرے کی مکھی پر مکھی۔ میڈیا ایک سے کورَس۔ غرض قوموں کی قومیں ایک سی ڈرِل کررہی ہیں۔  انسانی تنوع کو یہاں پوری بےدردی سے قتل کیا جارہا ہے۔

’’شناخت‘‘ ہی ختم ہوگئی تو پھر باقی کیا رہنا تھا؟ اب ایک ایک چیز پر بین کرنے کا فائدہ؟

اِس درندے کے ہاتھوں  لوگوں کے علاقائی کھیل تک ختم ہوگئے؛ آپ کا ہر بچہ اب کرکٹ کا بیٹ پکڑے نظر آئے گا؛ ’اپنی آبائی چیزوں‘ کے اب اِس کو ’درس‘ ہی دیے جاسکتے ہیں یا اس پر آہیں ہی بھری جاسکتی ہیں؛ ’’دین‘‘ نہیں بچا تو باقی کیا بچے گا؟! ہر ہر معنےٰ میں آپ اِس کے ہاتھوں موت پائیں گے۔  ’’اچکن‘‘ پہنے ہوئے بازاروں میں چلتا پھرتا آدمی آج قریب قریب آپ کو مسخرہ لگے گا! یہ اُس لباس کا حال ہے جو پورے برعظیم کا معززترین لباس تھا! رہ گئے علاقائی لباس، تو وہ صرف لوک میلوں اور نمائشوں میں دیکھنے کی چیز ہو گئے۔ یعنی ایک سو سال کے اندر اندر، آپ کے دیکھتے دیکھتے، آپ کی ثقافت کو انہوں نے میوزیم میں چن دیا۔  اپنی سو سال پرانی وضع قطع کے لحاظ سے آج آپ ایک عجائب گھر ہیں؛ اپنے آپ کو وہاں ڈھونڈیے۔ یہاں تک کہ کھانے پینے میں آپ کے ذوق بدل دیے۔  آپ کے بچوں کا من پسند مشروب آج ’کوک‘ اور ’پیپسی‘ اور من پسند کھانا ’پزا ہٹ‘ اور ’میکڈانلڈ‘ میں پایا جاتا ہے! آپ کی کوئی ایک چیز بچی ہو تو بتائیے! اِس کو کہیں گے فَرَّ مِنَ الۡمَـــطَـرِ وَقَــامَ تَحْـتَ الْمِـــيْـزَابِ ’’بارش سے بھاگا اور پرنالے کے نیچے جا کھڑا ہوا‘‘!

ہماری ’’جماعۃ المسلمین‘‘ اور اُن کی ’یو این کمیونٹی‘ کے مابین کیا کوئی موازنہ ہے؟!

 


ہمارا ایک گزشتہ مضمون پمفلٹ کی صورت میں دستیاب:

فتنہ   ہیومن ازم Rs15، ڈاک خرچ بذمہ ادارہ

مطبوعات ایقاظ



[1]  بہ سلسلہ تعلیق 12 ’’آسمانی شریعت نہ کہ سوشل کونٹریکٹ‘‘ حاشیہ ’’ح‘‘ (دیکھئے گزشتہ شمارہ ص 128)

[2]  نظریۂ پاکستان کی یہ بنیاد بلاشبہ قابلِ ستائش ہے کہ قومیں ’’ادیان‘‘ سے بنتی ہیں نہ کہ ’اوطان‘ سے؛ اور بنیادی طور پر یہ دنیا میں ’’خلافت‘‘ اور ’’دار الاسلام‘‘ کا روٹ ہے۔ کاش آگے چل کر اس کو ’ماڈرن نیشن‘ کے تصور سے نہ بدلا جاتا جو کہ ’’دین‘‘ کی بنیاد پر بننے والی اجتماعیت کی سو فیصد ضد ہے۔

[3]   کوئی گوند بلوچ اور پنجابی کو جوڑنے والی ’مذہب‘ سے بڑھ کر مضبوط ہو تو المورد کے حضرات براہِ کرم ضرور اس کی نشاندہی فرما ئیں؛ یہ جس بھی چیز کی نشاندہی کریں گے وہ آپ کے پنجابی کو خضدار کے بلوچ کے ساتھ جوڑنے سے پہلے امرتسر کے سکھ اور راجستھان کے ہندو کے ساتھ جوڑ کر دکھائے گی؛ اور وہ ’کہانی‘ مکمل ہو جائے گی جس کےلیے یو ایس سپانسرڈ چینلز اور ’امن کی آشا‘ کےلیے بےچین سٹوڈیوز کو المورد کے علاوہ کوئی مفتی دستیاب نہیں ہوتا!

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت
اصول- منہج
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
اصول- عقيدہ
حامد كمال الدين
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت حامد کمال الدین اسے فی الحال آپ ایک ناقص استقر۔۔۔
شخصیات اور پارٹیوں کے ساتھ تھوک کا معاملہ نہ کرنا
اصول- منہج
تنقیحات-
حامد كمال الدين
پراپیگنڈہ وار propaganda war میں سیگ منٹیشن segmentation (جزء کاری) ناگزیر ہوتی ہے۔ یعنی معاملے کو ای۔۔۔
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار.. اور امت کا طائفہ منصورہ
اصول- عقيدہ
اداریہ-
حامد كمال الدين
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار..  اور امت کا طائفہ منصورہ حالات کو سرسری انداز میں پڑھنا... واقعات م۔۔۔
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز
احوال-
اصول- منہج
راہنمائى-
حامد كمال الدين
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز تحریر: حامد کمال الدین میری نظر میں، اس۔۔۔
رسالہ اصول سنت از امام احمد بن حنبلؒ
اصول- عقيدہ
اصول- منہج
ادارہ
رســـــــــــــــــــــالة اصولِ سنت از امام احمد بن حنبل اردو استفاده: حامد كمال الدين امام ۔۔۔
’خطاکار‘ مسلمانوں کو ساتھ چلانے کا چیلنج
اصول- منہج
تنقیحات-
حامد كمال الدين
’خطاکار‘ مسلمانوں کو ساتھ چلانے کا چیلنج سوال: ایک مسئلہ جس میں افراط و تفریط کافی ہو ر۔۔۔
واقعۂ یوسف علیہ السلام کے حوالے سے ابن تیمیہ کی تقریر
تنقیحات-
اصول- منہج
حامد كمال الدين
قارئین کے سوالات واقعۂ  یوسف علیہ السلام کے حوالے سے ابن تیمیہ کی تقریر ہمارے کچھ نہایت عزیز ۔۔۔
’’آسمانی شریعت‘‘ نہ کہ ’سوشل کونٹریکٹ‘۔۔۔ ’’جماعۃ المسلمین‘‘ بہ موازنہ ’ماڈرن سٹیٹ‘
اصول- منہج
حامد كمال الدين
تعلیق 12   [1]   (بسلسلہ: خلافت و ملوکیت، از ابن تیمیہ) ’’آسمانی شریعت‘‘ نہ کہ ’سوشل ۔۔۔
"کتاب".. "اختلاف" کو ختم اور "جماعت" کو قائم کرنے والی
اصول- منہج
حامد كمال الدين
تعلیق 11   [1]   (بسلسلہ: خلافت و ملوکیت، از ابن تیمیہ) ’’کتاب‘‘ ’’اختلاف‘‘ کو خت۔۔۔
ديگر آرٹیکلز
حامد كمال الدين
باطل فرقوں کےلیے گنجائش پیدا کرواتے، دانش کے کچھ مغالطے   کچھ علمی چیزیں مانند (’’لازم المذھب لیس بمذھب‘۔۔۔
باطل- فرقے
حامد كمال الدين
شیعہ سٹوڈنٹ کے ساتھ دوستی، شادی بیاہ   سوال: السلام علیکم سر۔ یونیورسٹی میں ا۔۔۔
بازيافت- سلف و مشاہير
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
امارتِ حضرت معاویہؓ، مابین خلافت و ملوکیت نوٹ: تحریر کا عنوان ہمارا دیا ہوا ہے۔ از کلام ابن ت۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
سنت کے ساتھ بدعت کا ایک گونہ خلط... اور "فقہِ موازنات" حامد کمال الدین مغرب کے اٹھائے ہوئے ا۔۔۔
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
حامد كمال الدين
"انسان دیوتا" کے حق میں پاپ! حامد کمال الدین دین میں طعن کر لو، جیسے مرضی دین کے ثوابت ۔۔۔
بازيافت-
حامد كمال الدين
تاریخِ خلفاء سے متعلق نزاعات.. اور مدرسہ اہل الأثر حامد کمال الدین "تاریخِ خلفاء" کے تعلق س۔۔۔
باطل- اديان
حامد كمال الدين
ریاستی حقوق؛ قادیانیوں کا مسئلہ فی الحال آئین کے ساتھ حامد کمال الدین اعتراض: اسلامی۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
لفظ  "شریعت" اور "فقہ" ہم استعمال interchangeable    ہو سکتے ہیں ۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
ماتریدی-سلفی نزاع، یہاں کے مسلمانوں کو ایک نئی آزمائش میں ڈالنا حامد کمال الدین ایک اشع۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
منہجِ سلف کے احیاء کی تحریک میں ’مارٹن لوتھر‘ تلاش کرنا! حامد کمال الدین کیا کوئی وجہ ہے کہ۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
      کشمیر کاز، قومی استحکام، پختہ اندازِ فکر کی ضرورت حامد ۔۔۔
تنقیحات-
مشكوة وحى- علوم حديث
حامد كمال الدين
اناڑی ہاتھ درایت! صحیح مسلم کی ایک حدیث پر اٹھائے گئے اشکال کے ضمن میں حامد کمال الدین ۔۔۔
راہنمائى-
حامد كمال الدين
(فقه) عشرۃ ذوالحج اور ایامِ تشریق میں کہی جانے والی تکبیرات ابن قدامہ مقدسی رحمہ اللہ کے متن سے۔۔۔
تنقیحات-
ثقافت- معاشرہ
حامد كمال الدين
کافروں سے مختلف نظر آنے کا مسئلہ، دار الکفر، ابن تیمیہ اور اپنے جدت پسند حامد کمال الدین دا۔۔۔
اصول- منہج
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
اصول- عقيدہ
حامد كمال الدين
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت حامد کمال الدین اسے فی الحال آپ ایک ناقص استقر۔۔۔
ثقافت- خواتين
ثقافت-
حامد كمال الدين
"دردِ وفا".. ناول سے اقداری مسائل تک حامد کمال الدین کوئی پچیس تیس سال بعد ناول نام کی چیز ہاتھ لگی۔ وہ۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
امارات کا سعودی عرب کو یمن میں بیچ منجدھار چھوڑنے کا فیصلہ حامد کمال الدین شاہ سلمان کے شروع دنوں میں ی۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
پاک افغان معاملہ.. تماش بینی نہیں سنجیدگی حامد کمال الدین وہ طعنے جو میرے کچھ مخلص بھائی او۔۔۔
کیٹیگری
Featured
حامد كمال الدين
ادارہ
محمد قطب
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
سلف و مشاہير
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
حامد كمال الدين
ادارہ
مزيد ۔۔۔
باطل
فرقے
حامد كمال الدين
فكرى وسماجى مذاہب
حامد كمال الدين
اديان
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
معاشرہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
خواتين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
جہاد
مزاحمت
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم حديث
حامد كمال الدين
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز