عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Wednesday, July 17,2019 | 1440, ذوالقعدة 13
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
2014-07 آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
رمضان کےلیے بےتابی!
:عنوان

خرابیِ صحت کے باعث اچھی چیزوں کےلیے آدمی کی بھوک کسی وقت مر بھی جاتی ہے۔ یہاں؛ ’’بحالیِ صحت‘‘ چاہو تو... علمائے قلوب کےمطابق: ایسے آدمی کےحق میں سنت یہ ٹھہرےگی کہ وہ ایک چیز کو اپنے اوپر طاری کرنے کی کوشش کرے

. رقائق :کیٹیگری
حامد كمال الدين :مصنف


رمضان کےلیے بےتابی!

جب تک کسی چیز کو پانے کےلیے شوق ظاہر نہ کرو، وہ تمہاری منزلِ مراد نہیں ہوتی۔ ایسی چیز تمہاری زندگی کا کوئی سرِ راہ واقعہ تو ضرور ہوسکتا ہے؛ لیکن ’’منزل‘‘ ہم اس کو نہیں کہیں گے۔

ایک چیز سے جب تک تمہارا ’’مطلوب و مقصود‘‘ واضح نہیں، تب تک وہ تمہارے لیے بےمعنیٰ ہے، چاہے اپنی جگہ وہ کتنی ہی بیش قیمت اور نایاب ہو۔

رسول اللہﷺ کی زبان سے رمضان کا یوں تذکرہ ہونا... رمضان کےلیے تم میں بےقراری پیدا کرنے کےلیے ہی تو ہے:

إِذَا جَاءَ رَمَضَانُ فُتِّحَتْ أَبْوَابُ الْجَنَّةِ، وَغُلِّقَتْ أَبْوَابُ النَّارِ، وَصُفِّدَتِ الشَّيَاطِينُ[1]

رمضان آئے تو جنت کا ایک ایک دروازہ کھول دیا جاتا ہے۔ دوزخ کا ایک ایک دروازہ بند کردیا جاتا ہے۔ اور شیاطین جکڑ دیے جاتے ہیں۔

اتنے بڑے بڑے واقعات! پھر بھی وہی مردنی! وہی بےدلی! پھر بھی وہی پاؤں گھسیٹتے ہوئے چلنا۔ قدرشناسوں کو تو یہ باتیں بتائی ہی اس لیے گئی تھیں کہ لپک کر بڑھو! خدا کو تمہارے اندر وہ تڑپ ہی تو دیکھنی ہے جو تم میں پوشیدہ کسی ’’طلب‘‘ کی خبر دے۔ نوافل کے ڈھیر تو نہیں لگوانے!  اصل میں تو وہ چیز دیکھنی ہے جو کسی بےبہا ’’دولت‘‘ کی خبر پالینے والے کے اندر آپ سے آپ بولتی ہے۔ یہاں تو کُل نظر اُس ’’رغبت‘‘ اور ’’بےقراری‘‘  پر ہے جو ایک پیاسے کے انگ انگ میں ’’پانی‘‘ کا تصور کرلینے پر جھلکتی ہے! ’’آخرت کی پیاس‘‘ جو دنیا سے جی اچاٹ کر لینے والوں کے ہاں دیکھنے میں آتی ہے! ’’خدا کی جانب توجہ‘‘ جو ایک ایسے شخص میں آپ سے آپ پیدا ہوتی ہے جو جان چکا کہ ’’خدا‘‘ کیا ہستی ہے اور اُس لامحدود قوتوں اور قدرتوں کی مالک ہستی کا کسی پر ’’مہربان‘‘ ہونا  اور کسی سے خوش ہوکر اُس پر اپنی ’’نوازشات‘‘ فرمانا کیا معنیٰ رکھتا ہے! وہ ہستی جو مانگنے والوں کی ادائیں دیکھتی ہے:

الَّذِي يَرَاكَ حِينَ تَقُومُ   وَتَقَلُّبَكَ فِي السَّاجِدِينَ                                  (الشعراء: 218، 219)

وہ تمہیں دیکھتا ہے جب تم قیام میں ہوتے ہو

اور تمہارا آنا جانا عبادت گزاروں میں

تبھی؛ جب اہل نفاق کا ذکر کیا تو یہ نہیں کہا کہ وہ نماز کےلیے نہیں آتے اور صدقہ و زکات نہیں دیتے، بلکہ کہا:

وَلَا يَأْتُونَ الصَّلَاةَ إِلَّا وَهُمْ كُسَالَىٰ وَلَا يُنفِقُونَ إِلَّا وَهُمْ كَارِهُونَ                (التوبۃ: 54)

نماز کو آتے ہیں تو سست کاہل ہوکر اور خرچ کرتے ہیں تو ناخوشی سے

پس سب سے پہلی بات ہوئی کہ: ’’ایمان اور احتساب‘‘ کے اِس خصوصی کورس کےلیے، جس کی جزاء ’’مغفرت‘‘ سے کم کچھ نہیں ہے، خوب رغبت اور چاؤ ظاہر کرو۔

یہ بھی واضح رہے... خرابیِ صحت کے باعث اچھی چیزوں کےلیے آدمی کی بھوک کسی وقت مر بھی جاتی ہے۔ یہاں؛ ’’بحالیِ صحت‘‘ چاہو تو... علمائے قلوب کے مطابق: ایسے آدمی کے حق میں سنت یہ ٹھہرے گی  کہ وہ ایک چیز کو اپنے اوپر طاری کرنے کی کوشش کرے؛ کسی دکھاوے کےلیے نہیں بلکہ اپنے آپ کو ایک حالت سے دوسری حالت میں لانے کےلیے۔ ایسے آدمی کی محنت اور مجاہدہ دیکھ کر کسی وقت مالک اُس پر مہربان ہوجاتا ہے۔ اس کی سماجت دیکھ کر؛ اس کے دل بند کواڑ خیر کےلیے کھول دیے جاتے ہیں۔ آخر مریض صحتیاب ہوجاتا ہے اور نافع اشیاء کےلیے اُس کی اشتہاء بڑھنے لگتی ہے۔ اِس مبحث کے کئی ایک شواہد ہمیں ’’طبِ نبوی‘‘ کے اندر ملتے ہیں:

إنما العلم بالتَّعَلُّم، وإنما الحلم بالتَّحَلُّم، ومن يَتَحَرَّ الۡخَيرَ يُعطه، ومن يَتَّقِ الشرَّ يُوۡقَه[2]

علم تو آتا ہے سیکھ سیکھ کر۔ اور بردباری آتی ہے بردبار بننے کی کوشش کر کرکے۔ جو شخص خیر کی تلاش میں لگ گیا اُس کو خیر عطا کر ہی دی جاتی ہے۔ جو شر سے بچ بچ کر رہے اس کو شر سے بچا ہی لیا جاتا ہے۔

وَمَنْ يَسْتَعِفَّ يُعِفَّهُ اللَّهُ، وَمَنْ يَسْتَغْنِ يُغْنِهِ اللَّهُ، وَمَنْ يَتَصَبَّرْ يُصَبِّرْهُ اللَّهُ

(متفق علیہ)

اور جو شخص عفت اختیار کرے اللہ اُس کو عفت بخش دیتا ہے۔ جو شخص دل کا دولتمند ہونے کی کوشش کرے اللہ اس کے دل کو دولتمند کر دیتا ہے۔ اور جو شخص صبر طاری کرلے اللہ اسے صبر دے دیتا ہے۔

*****

دوزخ سے چھٹکارا پانے کےلیے بےچین اور جنت کے متلاشی ایک شخص کی نظر سے دیکھو، یہ راتیں کیا کچھ لے کر آتی ہیں:

عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: ((إِذَا كَانَ أَوَّلُ لَيْلَةٍ مِنْ شَهْرِ رَمَضَانَ صُفِّدَتِ الشَّيَاطِينُ وَمَرَدَةُ الْجِنِّ وَغُلِّقَتْ أَبْوَابُ النَّارِ فَلم يفتح مِنْهَا بَاب، وَفُتِحَتۡ أبۡوَابُ الْجَنَّةِ فَلَمْ يُغْلَقْ مِنْهَا بَابٌ، وَيُنَادِي مُنَادٍ: يَا بَاغِيَ الْخَيْرِ أَقْبِلْ وَيَا بَاغِيَ الشَّرِّ أقصر، وَلِلَّهِ عُتَقَاءُ مِنَ النَّارِ، وَذَلِكَ كُلَّ لَيْلَةٍ)).

(رَوَاهُ التِّرْمِذِيّ وَابْن مَاجَه)[3]

ابوہریرہ﷛ سے روایت ہے، کہا: فرمایا رسول اللہﷺ نے:

ماہِ رمضان کی پہلی ہی شب شیاطین اور بڑےبڑے بدمعاش جنات جکڑ دیے جاتے ہیں۔  دوزخ کے دروازے بند کردیے جاتے ہیں، یہاں تک کہ کوئی ایک بھی دروازہ کھلا نہیں رہنے دیا جاتا۔  جنت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں، یہاں تک کہ کوئی ایک بھی دروازہ بند نہیں رہنے دیا جاتا۔  اور ایک منادی کرنے والا منادی کرتا ہے:  اے خیر کے متلاشی! لے آگے بڑھ! اے شر کے متلاشی! کچھ کم ہوجا!

جبکہ بخاری کی ایک حدیث ہے کہ: رمضان کے شروع ہوتے ہی آسمان کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں:

إِذَا دَخَلَ شَهْرُ رَمَضَانَ فُتِّحَتْ أَبْوَابُ السَّمَاءِ                       (بخاری: رقم 1899)

اس حدیث کے تحت شارحینِ بخاری کہتے ہیں: اس کی غرض یہ کہ:

à     آسمان سے رحمتوں کا بکثر ت نزول،

à     خدا کی جانب سے اپنے بندوں کو نیک اعمال کی بکثرت توفیق ملنا،

à     بندوں کی جانب سے نیک اعمال کا بکثرت بلند ہونا

à     فرشتوں کا عالم بالا سے زمین کے باشندوں کے ساتھ بکثرت اتصال۔ ان کے اعمال کی بہت زیادہ ستائش

یہ ہوا مطلب رمضان کے شروع ہوتے ہی آسمان کے سب دروازے کھول دیے جانے کا!

جبکہ مسلم کی ایک حدیث ہے کہ: رمضان آتا ہے تو رحمت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں:

إِذَا كَانَ رَمَضَانُ فُتِّحَتْ أَبْوَابُ الرَّحْمَةِ                                       (مسلم: 1079)

تو کیا ہم نے غور کیا، یہاں کس کس طرح بندوں کے چاؤ پورے کرائے جاتے ہیں۔ کہیں جنت کے دروازے کھول دیے گئے۔ کہیں آسمانوں کے دروازے۔ کہیں رحمت کے دروازے۔ ذرا خود بتاؤ؛ بندوں کو ’’آواز‘‘ دینے اور ’’باریاب‘‘ کرنے کی اِس سے قوی کیا تعبیر ہوگی؟ مہربان پروردگار نے قربت کے طلبگاروں کو سارے ہی اشارے تو دے ڈالے!!!

اور ایک جگہ تو یوں بتایا جاتا ہے:

وَيُزَيِّنُ اللهُ عَزَّ وَجَلَّ كُلَّ يَوْمٍ جَنَّتَهُ، ثُمَّ يَقُولُ: يُوشِكُ عِبَادِي الصَّالِحُونَ أَنْ يُلْقُوا عَنْهُمُ الْمَئُونَةَ وَالْأَذَى وَيَصِيرُوا إِلَيْكِ[4]

رمضان میں ہر روز یوں ہوتا ہے کہ: اللہ تعالیٰ  اپنی جنت کو سجاتا ہے، پھر فرماتا ہے: قریب ہے کہ میرے نیک بندے اپنی سب تھکاوٹ اور تنگی اتار کر تیرے ہاں آرہیں!

*****

بھائی! اِس دنیائے فانی کو چھوڑنے سے پہلے خدا نے اگر کوئی مزید نماز نصیب کردی ہے، خدا کو کچھ اور سجدے کرجانے کا موقع دے دیا ہے، زندگی کا ایک اور مضان اگر دیکھنا مل گیا ہے، تو اِس کے پیچھے خدا کا کیا کیا لطف وعنایت پوشیدہ ہوسکتی ہے اور اس کے نتیجے میں کیسی کیسی بلندیِ درجات ہاتھ آسکتی ہے، یہاں کیسے کیسے امکانات تمہارے سامنے لا دھرے گئے ہیں... ذرا اِس ایک حدیث سے اندازہ کرلو:

عن طلحة بن عُبيد الله: أن رجلين قدما على رسول الله - صلى الله عليه وسلم - وكان إسلامهما جميعاً، وكان أحدهما أشدَّ اجتهاداً من صاحبه، فغزا المجتهد منهما، فاستشهد، ثم مكث الآخر بعده سنة، ثم توفي، قال طلحة: فرأيت فيما يرى النائم كأني عند باب الجنة، إذا أنا بهما وقد خرج خارج من الجنة، فأَذن للذي تُوفّي الآخرَ منهما، ثم خرج فأَذن للذي استشهد، ثم رجعِا إلىَّ، فقالا لى: ارجع، فإنَه لم يأْن لك بعد، فأصبح طلحةُ يحدّث به الناس، فعجبوا لذلك، فبلغ ذلك رسولَ الله - صلى الله عليه وسلم - فقال: من أيّ ذلك تعجبون؟ قالوا: يا رسول الله، هذا كان أشدَّ اجتهاداً ثم استُشهد في سبيل الله ودخل هذا الجنةَ قبله؟ فقال: أليس قد مكث هذا بعده سنة؟ قالوا: بلى، وأدرك رمضانَ فصامه؟ قالوا: بلى، وصلى كذا وكذا سجدةً في السنة؟ قالوا: بلى، قال رسول الله - صلى الله عليه وسلم -: فَلَما بينهما أبعدُ ما بين السماء والأرض. [5]

طلحہ بن عبیداللہ﷛ سے روایت ہے:

دو آدمی رسول اللہﷺ کے پاس (ہجرت کرکے)آئے۔ یہ دونوں اکھٹے اسلام لائے تھے۔ ان میں سے ایک اپنے ساتھی کی نسبت (عبادت میں) زیادہ محنت کرنے والا تھا۔ ان میں سے زیادہ محنت کرنے والا ایک بار جہاد پر نکلا اور شہید ہوگیا۔ دوسرا اس کے بعد ایک سال رہا، پھر وہ فوت ہوگیا۔ طلحہ کہتے ہیں: تب میں نے خواب دیکھا: گویا میں جنت کے دروازے کے پاس ان دونوں کو دیکھتا ہوں۔ جنت میں سے کوئی شخص نکل کر آتا ہے اور ان میں سے جو بعد میں فوت ہوا اس کو داخل ہونے کو کہتا ہے۔ پھر وہ دوبارہ باہر آتا ہے اور شہید ہونے والے کو داخل ہونے کو کہتا ہے۔ پھر وہ دونوں لوٹ کر میرے پاس آتے ہیں اور مجھے کہتے ہیں: تم واپس چلے جاؤ؛ تمہارا ابھی وقت نہیں ہوا۔ صبح ہوئی تو طلحہ وہ خواب لوگوں کو سنانے لگے اور لوگ اس پر متعجب ہونے لگے۔ تب وہ بات رسول اللہﷺ تک پہنچی، تو آپؐ نے فرمایا: اِس میں تعجب کی کیا بات ہے؟ لوگوں نے عرض کی: وہ (عبادت میں) زیادہ محنتی تھا، پھر وہ اللہ کے راستے میں شہید ہوا، جبکہ جنت میں  داخل یہ پہلے ہوا! تب آپﷺ نے فرمایا: کیا یہ اُس کے بعد پورا ایک سال زندہ نہیں رہا؟  لوگوں نے عرض کی: جی ہاں۔ آپﷺ نے فرمایا: اور اِس نے (پورا ایک) رمضان نہیں پایا اور اس کے روزے نہیں رکھے؟ لوگوں نے عرض کی: جی ایسا ہی ہے۔  فرمایا: پورا سال اس نے اتنی نماز اور اتنے سجدے نہیں کیے؟ عرض کی: جی ایسا تو ہے۔ تب رسول اللہﷺ نے فرمایا: تو پھر ان دونوں کے مابین اتنا فرق ہے جتنا زمین اور آسمان میں بھی نہیں!

دوسری جانب... ذرا یہ حدیث بھی سن لو کہ ایسا موقع ضائع کردینے والے کے نصیب میں کیا آسکتا ہے:

عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ارْتَقَى الْمِنْبَرَ فَقَالَ:  آمِينَ آمِينَ آمِينَ  فَقِيلَ لَهُ: يَا رَسُولَ اللهِ مَا كُنْتَ تَصْنَعُ هَذَا؟ فَقَالَ:  قَالَ لِي جَبْرَائِيلُ عَلَيْهِ السَّلَامُ: رَغِمَ أَنْفُ عَبْدٍ دَخَلَ عَلَيْهِ رَمَضَانُ فَلَمْ يُغْفَرْ لَهُ، فَقُلْتُ: آمِينَ، ثُمَّ قَالَ: رَغِمَ أَنْفُ عَبْدٍ ذُكِرْتَ عِنْدَهُ فَلَمْ يُصَلِّ عَلَيْكَ فَقُلْتُ: آمِينَ، ثُمَّ قَالَ: رَغِمَ أَنْفُ عَبْدٍ أَدْرَكَ وَالِدَيْهِ أَوْ أَحَدَهُمَا فَلَمْ يَدْخُلِ الْجَنَّةَ فَقُلْتُ: آمِينَ[6]

ابوہریرہ سے روایت ہے، کہ رسول اللہﷺ نے منبر پر چڑھتے ہوئے فرمایا: آمین۔ آمین۔ آمین۔ تب آپؐ سے عرض کی گئی: اے اللہ کے رسول! آپ کیا کر رہے تھے؟ تو آپﷺ نے فرمایا: جبریل نے مجھ سے کہا: نامراد ہو وہ شخص جس پر رمضان آیا اور اُس کی مغفرت نہ ہوئی۔ تو میں نے کہا: آمین۔ پھر اُس نے کہا: نامراد ہو وہ جس کے پاس آپ کا ذکر ہو اور وہ آپ پر درود نہ بھیجے۔ تو میں نے کہا: آمین۔ پھر اُس نے کہا: نامراد ہو وہ شخص جس نے والدین کو یا ان دونوں میں سے ایک کو پایا اور جنت نہ لی۔ تو میں نے کہا: آمین۔

*****



[1]   صحیح مسلم عن ابی ھریرۃ﷛، رقم  1079۔

[2]   صحیح الجامع الصغیر للألبانی، عن أبی ھریرۃ،  رقم  2328۔

[3]   صححہ الألبانی فی تخریجہٖ لمشکاۃ المصابیح رقم   1960۔

[4]   مسند احمد رقم  7917، عن أبی ھریرۃ۔ اکثر محدثین نے اس حدیث کو ضعیف کہا ہے۔ مگر کچھ نے شواہد کی بنا پر اس کا اعتبار کیا ہے مانند امام سفارینی حنبلی اور شیخ ابن عثیمین۔

[5]   مسند احمد رقم  1403، صححه الألباني في "التعليقات الحسان على صحيح ابن حبان رقم 2971

[6]   السنن الكبرى للبيهقي رقم 8504، المعجم الأوسط للطبراني 8994، صحح ابن خزيمة 1888، وصححه الألباني في صحيح الأدب المفرد ص 241

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
قنوتِ وتر۔ مسنون دعاؤں کے متن
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
قنوتِ وتر مسنون دعاؤں کے متن ترتیب: حامد کمال الدین نوٹ: دعاء یا اس کے ترجمہ میں جس جملے کی شرح ۔۔۔
قنوت میں دشمنان دین پر تبرا، اہل دین کےلیے دعائےخیر اور نبیﷺ پر درود
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
شرح دعائے قنوت تحریر: حامد کمال الدین 23 رمضانی قنوتِ وتر میں دشمنانِ دین پر تبرا، اہل دین کےلیے د۔۔۔
لَا أُحْصِي ثَنَاءً عَلَيْكَ، أَنْتَ كَمَا أَثْنَيْتَ عَلَى نَفْسِكَ (شرح قنوت 22
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
شرح دعائے قنوت تحریر: حامد کمال الدین 22 لَا أُحْصِي ثَنَاءً عَلَيْكَ، أَنْتَ كَمَا أَثْنَيْتَ عَل۔۔۔
وَأَعُوذُ بِكَ مِنْكَ (شرح قنوت 21
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
شرح دعائے قنوت تحریر: حامد کمال الدین 21 وَأَعُوذُ بِكَ مِنْكَ "میں تیری پناہ میں آتا ہوں تجھ ۔۔۔
وَبِمُعَافَاتِكَ مِنۡ عُقُوبَتِك (شرح قنوت 20
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
شرح دعائے قنوت تحریر: حامد کمال الدین 20 وَبِمُعَافَاتِكَ مِنۡ عُقُوبَتِك "تیرے درگزر کی پناہ ۔۔۔
اللَّهُمَّ إِنِّي أَعُوذُ بِرِضَاكَ مِنْ سَخَطِكَ (شرح قنوت 19
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
شرح دعائے قنوت تحریر: حامد کمال الدین 19 اللَّهُمَّ إِنِّي أَعُوذُ بِرِضَاكَ مِنْ سَخَطِكَ "ال۔۔۔
وَنَرْجُو رَحْمَتَكَ، وَنَخْشَى عَذَابَكَ (شرح قنوت 18
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
شرح دعائے قنوت تحریر: حامد کمال الدین 18 وَنَرْجُو رَحْمَتَكَ، وَنَخْشَى عَذَابَكَ "امیدوار&nb۔۔۔
وَإِلَيْكَ نَسْعَى وَنَحْفِدُ (شرح قنوت 17
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
شرح دعائے قنوت تحریر: حامد کمال الدین 17 وَإِلَيْكَ نَسْعَى وَنَحْفِدُ "ہماری سب سعی تیری طرف ۔۔۔
اللَّهُمَّ إِيَّاكَ نَعْبُدُ، وَلَكَ نُصَلِّي، وَنَسْجُدُ (شرح قنوت 16
رقائق- اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
شرح دعائے قنوت تحریر: حامد کمال الدین 16 اللَّهُمَّ إِيَّاكَ نَعْبُدُ، وَلَكَ نُصَلِّي، وَنَسْجُدُ۔۔۔
ديگر آرٹیکلز
احوال-
Featured-
حامد كمال الدين
امارات کا سعودی عرب کو یمن میں بیچ منجدھار چھوڑنے کا فیصلہ حامد کمال الدین شاہ سلمان کے شروع دنوں میں ی۔۔۔
احوال-
Featured-
حامد كمال الدين
پاک افغان معاملہ.. تماش بینی نہیں سنجیدگی حامد کمال الدین وہ طعنے جو میرے کچھ مخلص بھائی او۔۔۔
Featured-
احوال-
حامد كمال الدين
کلچرل وارداتیں اور ہماری عدم فراغت! حامد کمال الدین ظالمو! نہ صرف یہاں کا منبر و محراب ۔۔۔
Featured-
احوال-
Featured-
ادارہ
تحریر:   تحریم افروز یوں تو امریکا سے مسلمانوں  کے معاملے میں کبھی خیر کی توقع رہی ہی&۔۔۔
Featured-
احوال-
ادارہ
کچھ عرصے سے فلسطین کے مسئلے کے حل کے لیے امریکی صدر ٹرمپ کی "صدی کی ڈیل" کا شہرہ ہے۔دو سال بل جب ٹرمپ نے اق۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین بعض مباحث بروقت بیان نہ ہوں تو پڑھنے پڑھانے والوں کے حق میں ایک زیادتی رہ جاتی ہے۔ جذبہ۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
https://twitter.com/Hamidkamaluddin کچھ چیزوں کے ساتھ ’’تعامل‘‘ کا ایک مناسب تر انداز انہیں نظر۔۔۔
Featured-
باطل- جدال
حامد كمال الدين
کچھ ’مسلم‘ معترضینِ اسلام! تحریر: حامد کمال الدین پچھلے دنوں ایک ٹویٹ میرے یہاں سے  ہو۔۔۔
اصول- منہج
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
پراپیگنڈہ وار propaganda war میں سیگ منٹیشن segmentation (جزء کاری) ناگزیر ہوتی ہے۔ یعنی معاملے کو ای۔۔۔
بازيافت-
ادارہ
ہجرت کے پندرہ سو سال بعد! حافظ یوسف سراج کون مانے؟ کسے یقیں آئے؟ وہ چار قدم تاریخِ ان۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
میرے اسلام پسندو! پوزیشنیں بانٹ کر کھیلو؛ اور چال لمبی تحریر: حامد کمال الدین یہ درست ہے کہ۔۔۔
احوال- امت اسلام
ذيشان وڑائچ
ہمارے کچھ نوجوان طیب اردگان کے بارے میں عجیب و غریب الجھن کے شکار ہیں۔ کوئی پوچھ رہا ہے کہ۔۔۔
احوال- امت اسلام
حامد كمال الدين
’’سلفیوں‘‘ کے ساتھ تھوڑی زیادتی ہو رہی ہے!    عرب داعی محترم ابو بصیر طرطوسی کے ساتھ بہت م۔۔۔
اصول- عقيدہ
اداریہ-
حامد كمال الدين
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار..  اور امت کا طائفہ منصورہ حالات کو سرسری انداز میں پڑھنا... واقعات م۔۔۔
احوال-
اصول- منہج
راہنمائى-
حامد كمال الدين
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز تحریر: حامد کمال الدین میری نظر میں، اس۔۔۔
Featured-
ثقافت- خواتين
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر اجالا عثمان انٹرنیٹ سے لی گئی ایک تحریر جو ہمیں ا۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
"نبوی منہج" سے متعلق ایک مغالطہ کا ازالہ حامد کمال الدین ایک تحریکی عمل سے متعلق "نبوی منہج۔۔۔
متفرق-
ادارہ
پطرس کے ’’کتے‘‘ کے بعد! تحریر: ابو بکر قدوسی مصنف کی اجازت کے بغیر شائع کی جانے والی ای۔۔۔
کیٹیگری
Featured
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
منہج
حامد كمال الدين
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
ادارہ
تاريخ
ادارہ
سلف و مشاہير
مہتاب عزيز
مزيد ۔۔۔
باطل
جدال
حامد كمال الدين
فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فرقےاعتزال
ادارہ
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
خواتين
ادارہ
رواج و رجحانات
ذيشان وڑائچ
معاشرہ
عرفان شكور
مزيد ۔۔۔
جہاد
مزاحمت
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ابن علی
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
ادارہ
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز