عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Tuesday, January 21,2020 | 1441, جُمادى الأولى 25
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
2014-10 TaamulAhleQibla آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
فصل 5: امتِ محمدیہ کے خطاکار
:عنوان

"کتاب کے وارثوں" کا ذکر شروع ہی کس طبقے سے کیا گیا: فمنهم ظالم لنفسه "ان میں کوئی اپنی جان پر ظلم کرلیتا ہے" ومنهم مقتصد "ان میں کوئی میانہ چال پر ہے" ومنهم سابق بالخيرات بإذن الله "اور ان میں کوئی وہ ہے جو

. اصولمنہج :کیٹیگری
حامد كمال الدين :مصنف

 شرح ’’تعامل اہل قبلہ‘‘ 5

امتِ محمدیہ کے خطاکار

اہل سنت کے ہاں کیونکر دیکھے جاتے ہیں

قرآن مجید کا یہ نہایت خوبصورت مضمون جس میں اِس امت کا اپنے گنہگاروں سمیت برگزیدہ ہونا بیان ہوا ہے... شیخ سفرالحوالی اپنی تحریر و تقریر میں اس کی جانب بکثرت توجہ دلاتے ہیں۔ حالیہ رسالہ میں بھی اس کی جانب اشارہ ہوا ہے:

ثُمَّ أَوْرَثْنَا الْكِتَابَ الَّذِينَ اصْطَفَيْنَا مِنْ عِبَادِنَا ۖ فَمِنْهُمْ ظَالِمٌ لِّنَفْسِهِ وَمِنْهُم مُّقْتَصِدٌ وَمِنْهُمْ سَابِقٌ بِالْخَيْرَاتِ بِإِذْنِ اللَّـهِۚ    ذَٰلِكَ هُوَ الْفَضْلُ الْكَبِيرُ   (فاطر: 32) 

’’ پھر ہم نے کتاب کا وارث کیا اپنے چُنے ہوئے بندوں کو۔ ایسے کہ: ان میں کوئی اپنی جان پر ظلم کرلیتا ہے۔ ان میں کوئی میانہ چال پر ہے۔ اور ان میں کوئی وہ ہے جو اللہ کے حکم سے بھلائیوں میں سبقت لے گیا۔ (اگر تم سمجھو تو) یہ (اللہ کا تم پر)  بہت بڑا فضل ہے‘‘۔

چنانچہ ’’کتاب کے وارث‘‘ یہاں ایک نہیں بلکہ تین طبقے ذکر ہوئے۔ سفرالحوالی کے بقول: لطف کی بات یہ ہے کہ ’’کتاب کے وارثوں‘‘  کا ذکر شروع ہی اُس طبقے سے کیا گیا جو ان میں سب سے کمتر ہے، سبحان اللہ:

»       فَمِنْهُمْ ظَالِمٌ لِّنَفْسِهِ  ’’ان میں کوئی اپنی جان پر ظلم کرلیتا ہے‘‘

»       وَمِنْهُم مُّقْتَصِدٌ  ’’ان میں کوئی میانہ چال پر ہے‘‘۔

»       وَمِنْهُمْ سَابِقٌ بِالْخَيْرَاتِ بِإِذْنِ اللَّـهِ   ’’اور ان میں کوئی وہ ہے جو اللہ کے حکم سے بھلائیوں میں سبقت لے گیا‘‘۔

شیخ سفر الحوالی اِس آیت کے ضمن میں حضرت عائشہؓ کے بیان[1]   کو دیگر تفسیری اقوال پر ترجیح دیتے ہوئےاس شرعی حقیقت کی نشاندہی کرتے ہیں کہ: [2]

منکروں اور جھٹلانے والوں کے مقابلے پر... اِس توحید، اِس قرآن، اِس شریعت اور اِس نبیؐ   کو دل سے مان لینے والوں میں خدا کے جو مقربین اور اولیاء ہیں ان خوش نصیبوں کی تو خیر بات ہی کیا ہے۔ اِن میں جو گناہگار اور آلودہ دامن ہیں، وہ بھی باوجود اس کے کہ اپنی فرداًفرداً حیثیت میں خدا کی عدالت میں پکڑے جانے کے خطرے سے باہر نہیں ہیں، پھر بھی بطورِمجموعی وہ ’’خدا کے چنیدہ بندوں‘‘ اور ’’کتابِ آسمانی کے وارثوں‘‘ میں باقاعدہ مذکور ہوتے ہیں! چنانچہ فرماتے ہیں: سورۃ فاطر کے اِس مقام پر ذرا ان باتوں پر غور کرو:

1.       یہ تینوں طبقے مل کر کتاب کے وارث ہوئے۔ یہاں ’’کتاب‘‘ سے مراد: دین، قرآن، نبوت۔ جو بنی اسرائیل کے بعد اِس امت کو ملی۔

2.       پھر فرمایا: الَّذِينَ اصْطَفَيْنَا مِنْ عِبَادِنَا۔ یعنی یہ تینوں طبقے خدا کے چنے ہوئے، خدا کے پسندیدہ برگزیدہ ہیں۔

3.       پھر فرمایا: ذَٰلِكَ هُوَ الْفَضْلُ الْكَبِيرُ۔ یہ چیز جو یہ تینوں طبقے خدا سے پانے میں کامیاب ہوئے، ایک غیرمعمولی فضل ہے۔

4.       یہ ہوا اِن کا سٹیٹس اِس دنیا میں۔ اگلی آیت میں فرمایا کہ آخرت میں یہ سبھی جنت میں جانے والے ہیں: جَنَّاتُ عَدْنٍ يَدْخُلُونَهَا يُحَلَّوْنَ فِيهَا مِنْ أَسَاوِرَ مِن ذَهَبٍ وَلُؤْلُؤًاۖ      وَلِبَاسُهُمْ فِيهَا حَرِيرٌ۔ وَقَالُوا الْحَمْدُ لِلَّـهِ الَّذِي أَذْهَبَ عَنَّا الْحَزَنَۖ      إِنَّ رَبَّنَا لَغَفُورٌ شَكُورٌ  الَّذِي أَحَلَّنَا دَارَ الْمُقَامَةِ مِن فَضْلِهِ لَا يَمَسُّنَا فِيهَا نَصَبٌ وَلَا يَمَسُّنَا فِيهَا لُغُوبٌ  (فاطر: 33 تا 35) ’’ہمیشہ رہنے والی جنتیں ہیں جن میں یہ داخل ہوں گے، وہاں اِنہیں سونے کے کنگن اور موتی پہنائے جائیں گے۔ اور پوشاک اِن کی وہاں ریشم ہوگی۔  یہ وہاں بولیں گے: سب خوبیاں اللہ کو،جس نے ہمارا سب غم دور کر دیا۔ ارے ہمارا پروردگار تو بڑا ہی بخشنے والا بہت ہی قدردان ہے!جس نے ہم کو بس اپنے ہی فضل سے اِس سدا رہنے کے مقام پر لا اُتارا ہے۔ یہاں ہمیں نہ کوئی رنج پہنچنے کا اور نہ کوئی خستگی‘‘۔

5.       پھر اس سے اگلی آیات میں... اِن تین (چنیدہ) گروہوں کے مقابلے پر... اِس توحید، اِس قرآن، اِس شریعت اور اِس نبیؐ   پر ایمان نہ لانے والوں کا وہ حشر دکھایا گیا ہے جو ان کے ساتھ آخرت میں پیش آنے والا ہے۔ کیونکہ نعمت کا اصل اندازہ اس وقت ہوتا ہے جب اس کی ضد سامنے لائی جائے اور جوکہ رونگٹے کھڑے کر دینے والی ہے۔ یہ قرآن مجید کے خوفناک ترین مقامات میں سے ایک ہے۔ نسأل اللہ السلامۃ

اِن تین درجوں کا بیان اختصار کے ساتھ یوں ہے کہ:

1.       ظَالِمٌ لِّنَفْسِهِ: امت کے وہ لوگ ہوں گے جو فرائض کی ادائیگی میں تقصیر کرلیتے ہیں، نیز حرام کاموں کا ارتکاب کر بیٹھتے ہیں۔

2.       مُّقْتَصِدٌ: امت کے وہ لوگ جو فرائض باحسن اسلوب ادا کرتے ہیں۔ اور حرام کاموں سے برابر دستکش رہتے ہیں۔

3.       سَابِقٌ بِالْخَيْرَاتِ: امت کے وہ لوگ جو فرائض کی باحسن اسلوب ادائیگی کے ساتھ ساتھ مستحبات اور قُرُبات کو اختیار کرنے میں بھی پورا زور لگاتے ہیں۔ نیز حرام کاموں سے دستکش ہونے کے ساتھ ساتھ شبہات اور نامناسب اشیاء سے بھی دامن کش رہتے ہیں۔

*****

یہ فصل دراصل ایک اور مبحث میں جانے کےلیے تمہید کے طور پر دی گئی ہے۔ اور وہ مبحث یہ کہ امت کی تاریخ کے وہ ادوار جنہیں ہم اِستنفارِ عام (عام دُہائی)  کے ادوار کہتے ہیں... وہاں اہل سنت کا منہج یہ رکھا جاتا ہے کہ عوام اہل قبلہ کو کفر کی یلغار کے خلاف میدان میں جا اترنے کی صدا لگائی جاتی ہے، اور اُس وقت کوئی ایسی شرط نہیں لگائی جاتی کہ کفر کے خلاف اہل سنت کی اِس جنگ میں صرف ’’نیک‘‘ اور ’’باشرع‘‘ لوگ ہی شامل ہوں، یا صرف ’’صحیح العقیدہ‘‘ لوگ ہی شریک ہوں۔ یہ مبحث ان شاءاللہ اگلی فصل میں بیان ہوگا۔

 



[1]    بعض متقدمین سے سوۃ فاطر میں مذکور اِن تین گروہوں کو سورۃ الواقعۃ میں مذکور تین گروہوں پر محمول کرنا آتا ہے (وَکُنۡتُمۡ أزۡوَاجاً ثَلاثَۃً) اس قول کی رُو سے فاطر کا ’’ظالمٌ لنفسہ‘‘ واقعہ کا ’’اصحاب الشمال‘‘ یا ’’اصحاب المشأمۃ‘‘ ٹھہرتا ہے۔ لیکن سفرالحوالی حضرت عائشہ﷞ اور ان کے ہم موقف بزرگانِ سلف کے قول کو ترجیح دیتے ہیں۔ خود ابن جریر طبری﷫ نے سب اقوال نقل کردینے کے بعد اِسی کو ترجیح دی ہے کہ سورۃ فاطر کے تینوں گروہ جنت میں جانے والے ہیں۔ بلکہ ابن جریر اس اشکال کا بھی جواب دیتے ہیں کہ اگر یہ تینوں کے تینوں گروہ جنتی ہیں تو پھر اہل ایمان میں سے دوزخ کی وعید کا محل تو کوئی بھی نہ رہا! ابن جریرؒ  فرماتے ہیں: بات یوں نہیں بلکہ مراد یہ کہ آخرکار جنتی ہیں خواہ کوئی بغیر حساب کے جنت میں چلا جائے، خواہ حسابِ یسیر (ہلکی پھلکی بازپرس) کے ساتھ، یا کچھ سزا کاٹ کر۔

[2]    شیخ سفر الحوالی کے یہ افکار ہم نے ان کے تین محاضرات سے اکٹھے کیے ہیں:

1.        دروس رحلة فتح المجيد: درجات الناس في الأمن والاهتداء http://goo.gl/sUoPK0 

2.        لقاء خاص: اصطفاء الله لهذه الأمة                http://goo.gl/8QISDj 

3.        خصائص أهل السنة والجماعة:                      http://goo.gl/1Y8ZLc   

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت
اصول- منہج
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
اصول- عقيدہ
حامد كمال الدين
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت حامد کمال الدین اسے فی الحال آپ ایک ناقص استقر۔۔۔
شخصیات اور پارٹیوں کے ساتھ تھوک کا معاملہ نہ کرنا
اصول- منہج
تنقیحات-
حامد كمال الدين
پراپیگنڈہ وار propaganda war میں سیگ منٹیشن segmentation (جزء کاری) ناگزیر ہوتی ہے۔ یعنی معاملے کو ای۔۔۔
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار.. اور امت کا طائفہ منصورہ
اصول- عقيدہ
اداریہ-
حامد كمال الدين
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار..  اور امت کا طائفہ منصورہ حالات کو سرسری انداز میں پڑھنا... واقعات م۔۔۔
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز
احوال-
اصول- منہج
راہنمائى-
حامد كمال الدين
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز تحریر: حامد کمال الدین میری نظر میں، اس۔۔۔
رسالہ اصول سنت از امام احمد بن حنبلؒ
اصول- عقيدہ
اصول- منہج
ادارہ
رســـــــــــــــــــــالة اصولِ سنت از امام احمد بن حنبل اردو استفاده: حامد كمال الدين امام ۔۔۔
’خطاکار‘ مسلمانوں کو ساتھ چلانے کا چیلنج
اصول- منہج
تنقیحات-
حامد كمال الدين
’خطاکار‘ مسلمانوں کو ساتھ چلانے کا چیلنج سوال: ایک مسئلہ جس میں افراط و تفریط کافی ہو ر۔۔۔
واقعۂ یوسف علیہ السلام کے حوالے سے ابن تیمیہ کی تقریر
تنقیحات-
اصول- منہج
حامد كمال الدين
قارئین کے سوالات واقعۂ  یوسف علیہ السلام کے حوالے سے ابن تیمیہ کی تقریر ہمارے کچھ نہایت عزیز ۔۔۔
’’آسمانی شریعت‘‘ نہ کہ ’سوشل کونٹریکٹ‘۔۔۔ ’’جماعۃ المسلمین‘‘ بہ موازنہ ’ماڈرن سٹیٹ‘
اصول- منہج
حامد كمال الدين
تعلیق 12   [1]   (بسلسلہ: خلافت و ملوکیت، از ابن تیمیہ) ’’آسمانی شریعت‘‘ نہ کہ ’سوشل ۔۔۔
"کتاب".. "اختلاف" کو ختم اور "جماعت" کو قائم کرنے والی
اصول- منہج
حامد كمال الدين
تعلیق 11   [1]   (بسلسلہ: خلافت و ملوکیت، از ابن تیمیہ) ’’کتاب‘‘ ’’اختلاف‘‘ کو خت۔۔۔
ديگر آرٹیکلز
Featured-
باطل- فرقے
حامد كمال الدين
شیعہ سٹوڈنٹ کے ساتھ دوستی، شادی بیاہ   سوال: السلام علیکم سر۔ یونیورسٹی میں ا۔۔۔
بازيافت- سلف و مشاہير
Featured-
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
امارتِ حضرت معاویہؓ، مابین خلافت و ملوکیت نوٹ: تحریر کا عنوان ہمارا دیا ہوا ہے۔ از کلام ابن ت۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
سنت کے ساتھ بدعت کا ایک گونہ خلط... اور "فقہِ موازنات" حامد کمال الدین مغرب کے اٹھائے ہوئے ا۔۔۔
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
Featured-
حامد كمال الدين
"انسان دیوتا" کے حق میں پاپ! حامد کمال الدین دین میں طعن کر لو، جیسے مرضی دین کے ثوابت ۔۔۔
Featured-
بازيافت-
حامد كمال الدين
تاریخِ خلفاء سے متعلق نزاعات.. اور مدرسہ اہل الأثر حامد کمال الدین "تاریخِ خلفاء" کے تعلق س۔۔۔
Featured-
باطل- اديان
حامد كمال الدين
ریاستی حقوق؛ قادیانیوں کا مسئلہ فی الحال آئین کے ساتھ حامد کمال الدین اعتراض: اسلامی۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
لفظ  "شریعت" اور "فقہ" ہم استعمال interchangeable    ہو سکتے ہیں ۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
ماتریدی-سلفی نزاع، یہاں کے مسلمانوں کو ایک نئی آزمائش میں ڈالنا حامد کمال الدین ایک اشع۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
منہجِ سلف کے احیاء کی تحریک میں ’مارٹن لوتھر‘ تلاش کرنا! حامد کمال الدین کیا کوئی وجہ ہے کہ۔۔۔
Featured-
احوال-
حامد كمال الدين
      کشمیر کاز، قومی استحکام، پختہ اندازِ فکر کی ضرورت حامد ۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
مشكوة وحى- علوم حديث
حامد كمال الدين
اناڑی ہاتھ درایت! صحیح مسلم کی ایک حدیث پر اٹھائے گئے اشکال کے ضمن میں حامد کمال الدین ۔۔۔
راہنمائى-
حامد كمال الدين
(فقه) عشرۃ ذوالحج اور ایامِ تشریق میں کہی جانے والی تکبیرات ابن قدامہ مقدسی رحمہ اللہ کے متن سے۔۔۔
تنقیحات-
ثقافت- معاشرہ
حامد كمال الدين
کافروں سے مختلف نظر آنے کا مسئلہ، دار الکفر، ابن تیمیہ اور اپنے جدت پسند حامد کمال الدین دا۔۔۔
اصول- منہج
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
اصول- عقيدہ
حامد كمال الدين
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت حامد کمال الدین اسے فی الحال آپ ایک ناقص استقر۔۔۔
ثقافت- خواتين
ثقافت-
حامد كمال الدين
"دردِ وفا".. ناول سے اقداری مسائل تک حامد کمال الدین کوئی پچیس تیس سال بعد ناول نام کی چیز ہاتھ لگی۔ وہ۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
امارات کا سعودی عرب کو یمن میں بیچ منجدھار چھوڑنے کا فیصلہ حامد کمال الدین شاہ سلمان کے شروع دنوں میں ی۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
پاک افغان معاملہ.. تماش بینی نہیں سنجیدگی حامد کمال الدین وہ طعنے جو میرے کچھ مخلص بھائی او۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
کلچرل وارداتیں اور ہماری عدم فراغت! حامد کمال الدین ظالمو! نہ صرف یہاں کا منبر و محراب ۔۔۔
کیٹیگری
Featured
حامد كمال الدين
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
سلف و مشاہير
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
حامد كمال الدين
ادارہ
مزيد ۔۔۔
باطل
فرقے
حامد كمال الدين
فكرى وسماجى مذاہب
حامد كمال الدين
اديان
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
معاشرہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
خواتين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
جہاد
مزاحمت
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم حديث
حامد كمال الدين
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز