عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Friday, May 29,2020 | 1441, شَوّال 5
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
2014-10 TaamulAhleQibla آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
فصل 4: "عوام الناس" ہمارے ہیں!
:عنوان

کسی کان میں خالق کا اپنا کلام یا اسکےرسولؐ کا اپنا بیان کم پڑا ہو (اور اس معنی میں تو ضرور ہم مانیں گےکہ کسی خطے میں اہل سنت کا کام بہت پیچھےہو) لیکن "کان" کی اپنی وہ طبعی استعداد "تبدیل" بہرحال نہیں ہوئی ہوتی

. اصولمنہج :کیٹیگری
حامد كمال الدين :مصنف



 شرح ’’تعامل اہل قبلہ‘‘ 4

"عوام الناس" ہمارے ہیں

(بسلسلہ حاشیہ 3، متن سفر الحوالی)

ڈاکٹر سفر الحوالی نے اپنی تحریر و تقریر میں اِس نقطہ کو جابجا واضح کیا ہے۔

عام طور پر یہ تصویر یوں دکھائی جاتی ہے کہ تقریباً پورا برصغیر ’’ماتریدیہ‘‘ ہے۔ یا ’’المھنَّد علی المفنَّد‘‘ کو اپنے عقیدہ کے مراجع میں گنتا ہے۔ پورا مصر، شام اور عراق ’’اشاعرہ‘‘ ہے۔ پورا ترکی اور وسط ایشیا فلاں ٹھپے کا معتقد ہے۔ پورا شمالی افریقہ فلاں لیبل کا حامل ہے۔ وغیرہ وغیرہ وغیرہ۔ یہ تم لوگ جس ’اہل سنت‘ کی بات کرتے ہو، کہ جس میں ’’ماتریدیہ‘‘ اور ’’اشاعرہ‘‘ کی تاویلِ صفات وغیرہ بھی نہ ہوں، اور فلاں ٹھپے کے فلاں فلاں خلافِ سنت مسئلے اور فلاں لیبل کے فلاں خلافِ معتقدِ سلف اقوال بھی نہ ہوں... وہ تو آٹے میں نمک کے برابر بھی نہیں۔ تمہاری تو یہاں کوئی نسبت ہی نہیں بنتی!شیخ سفرالحوالی کا کہنا ہے: آئیے یہ تصویر ہم آپ کو دکھاتے ہیں:

یہ ہم بیان کر چکے کہ فیصلہ ’’ٹھپے‘‘ اور ’’لیبل‘‘ پر نہیں ہوگا۔ وہ تم جتنے مرضی لگاتے رہو ؛ ایجاباً اور سلباً، غیرمؤثر ہے۔ اصل فیصل یہ ہے کہ کسی آدمی نے ایک باطل اعتقاد کو سوچ سمجھ کر اختیار کر رکھا ہو۔ تو پھر اب ہم پوچھتے ہیں: برصغیر کے عوام الناس میں کتنے ہیں جو باقاعدہ اپنا یہ عقیدہ بیان کریں کہ اللہ رب العزت اپنے ’’عرش‘‘ پر نہیں ہے؟ (معاذاللہ)۔ یا یہ کہ اللہ رب العزت کی ’’رحمت‘‘ حقیقی نہیں ہے بلکہ ’’رحمت‘‘ کا مطلب صرف ’احسان کا ارادہ کرنا‘ ہے نہ کہ فی الحقیقت مہربان ہونا؟ اور یہ کہ اللہ کا ’’غضب‘‘ حقیقی نہیں ہے بلکہ ’’غضب‘‘ کا مطلب ہے ’عذاب کا ارادہ کرنا‘؟ کتنے ہیں جو اپنا یہ اعتقاد بتائیں کہ اللہ کا کسی سے ’’خوش ہونا‘‘ حقیقی نہیں ہے؟ اللہ کا کسی سے ’’ناراض ہونا‘‘ حقیقی نہیں ہے؟ کتنے ہی جو اس چیز کو یاد کرتے اور کراتے دنیا سے جاتے ہیں کہ رسول اللہﷺ کی قبر کا بقعۂ ارضی فضیلت میں کعبے، کرسی اور عرشِ خداوندی سے اوپر ہے؟  مصر، شام اور عراق کے عوام الناس میں کتنے ہیں جو اعتقاد رکھیں کہ اللہ اوپر نہیں ہے؟ جو اپنا یہ عقیدہ بتائیں کہ اللہ کو ’’اوپر‘‘ کہنے سے ’سمت‘ لازم آتی ہے لہٰذا ہم تو خدا کےلیے ’سمت‘ بیان کرنے کا گناہ نہیں کریں گے! جو یہ اعتقاد رکھیں کہ اللہ کا کسی سے ’’محبت‘‘ کرنا حقیقی نہیں ہے؟ وغیرہ وغیرہ۔ اور اب ہم آپ سے پوچھ لیتے ہیں کہ:  برصغیر، مصر، شام، عراق اور شمالی افریقہ کے یہ جو ’’عوام المسلمین‘‘ کے ٹھٹھ ہیں ان میں سے اللہ کے فضل سے کتنے ہیں جو اللہ کے کسی سے ’’خوش ہونے‘‘ کو ’’حقیقی خوش ہونا‘‘ ہی مانتے ہیں؟ جو اللہ کے ’’غضب‘‘ کو ’’حقیقی غضب‘‘ ہی مانتے ہیں؟ جو اللہ کی رحمت کو ’’حقیقی رحمت‘‘ ہی مانتے ہیں؟ جو یہ اعتقاد رکھتے ہیں کہ اللہ اپنے نیک بندوں سے فی الحقیقت ’’محبت‘‘ کرتا ہے... اور ان صفات کی وہ فلسفیانہ توجیہات جو اشاعرہ اور ماتریدیہ کے ہاں ایک درجہ پر جا کر کروائی جاتی ہیں، یہ سب ان توجیہات کو ہکابکا ہو کر ہی سنتے ہیں۔  تو پھر یہ ’’عوام الناس‘‘ ہمارے ہوئے یا تمہارے؟ حق یہ کہ ’ٹھپے‘ تمہارے اور ’’لوگ‘‘ ہمارے!

یہ کلامی بحثیں اور پیچیدہ نکتے تو یہاں کے خطیبوں اور داعیوں کے علم میں نہ ہوں گے کجا ’’عوام الناس‘‘؟!

اور یہ کلامی نکتے تو علماء کو مشکل سے سمجھ آتے ہیں!

اس لحاظ سے؛ ہم کہیں گے، برصغیر میں "ماتریدیہ" چند سو نکل آئیں اور مصر و شام میں "اشاعرہ" چند سو سے بڑھ جائیں تو بڑی بات ہے؛ یعنی آٹے میں نمک کے برابر۔

بلکہ شیخ سفرالحوالی متقدمین ائمہ اہل سنت سے استشہاد کرتے ہوئے، ایک قدم اور آگے بڑھتے ہیں، اور اہل سنت کا یہ اصیل مبحث سامنے لاتے ہیں کہ:

عقیدۂ سلف کی خاصیت یہ ہے کہ نصوصِ کتاب و سنت کو ان کے فطری معانی پر باقی رہنے دیا جائے۔ چنانچہ ’’ایمان‘‘ کی جو حقیقتیں کتاب اور سنت کے اپنے الفاظ میں آگئی ہیں وہ خود ہی لوگوں کے اذہان کی بےساختہ تشکیل کرجاتی ہیں۔ اس میں جب تک آپ کچھ ’مزید‘ نہ کریں تب تک آپ کا وہ ’مزید‘ انہی الماریوں میں دھرا اور گاہےگاہے کی انہی بحثوں میں پڑا رہتا ہے؛ جبکہ لوگ اُس ’’فطرت‘‘ اور ’’بےساختہ معانی‘‘ پر باقی رہتے ہیں جو خالق کی پہچان  کی بابت قلوب میں ودیعت کیے گئے ہیں اور جن کی مدد سے وہ نصوص میں بیان ہونے والی ’’ایمان‘‘ کی حقیقتوں کو کسی تکلف کے بغیر لیتے ہیں۔ اس لیے یہ تو ہو سکتا ہے کہ کسی کان میں خالق کا اپنا کلام یا اُس کے رسولؐ  کا اپنا بیان کم پڑا ہو (اور اس معنیٰ میں تو ضرور ہم  مانیں گے کہ کسی خطے میں اہل سنت کا کام بہت پیچھے ہو)  لیکن ’’کان‘‘ کی اپنی وہ طبعی استعداد ’’تبدیل‘‘ بہرحال نہیں ہوئی ہوتی۔ اس میں جتنا سا کتاب اور سنت کا کلام پڑا ہےوہ اپنی اصل حالت پر ہے؛ اور ’’اہل سنت‘‘ ہونا یہی ہے۔

یہاں شیخ سفر وہ ’’فطرت‘‘ والی دلیل لےکر آتے ہیں جو احادیث میں مذکور ہوئی: (کل مولود یولَد على فطرۃ الإسلام)۔ یعنی ہر  مولود  اسلام کی ’’فطرت‘‘ لے کر دنیا میں آتا ہے؛ جب تک ’’ماحول‘‘ اس کو ’’تبدیل‘‘ نہ کردے وہ ’’فطرت‘‘ اپنی جگہ باقی رہتی ہے۔ اس لیے دیکھنا یہ ہے کہ عقیدہ کے کسی مخصوص ’’ورژن‘‘ نے  اذہان کو ’’تبدیل‘‘ کتنا کیا ہے؛ کیونکہ اگر ایک واضح ’’تبدیلی‘‘ ثابت نہ ہو تو وہ چیز اپنی ہی اصل پر باقی تصور ہوگی۔

 اب چونکہ "ایمان" جو کتاب اور سنت میں آیا وہ تو اِس "فطرت" کو تبدیل نہیں کرتا بلکہ اِس کو آسودہ کرتا اور اِس کو طبعی حالت پر برقرار رکھتے ہوئے اِس کی نشوونما کرتا ہے.. اور چونکہ سلف کا طریق "ایمان" کے اِن حقائق کو جو کتاب اور سنت میں بیان ہوئے ان کے "فطری معانی" پر باقی رکھنا اور ان میں کوئی "تصرف" کرنے سے گریز کرنا ہے...  لہٰذا کسی بھی معاشرے کے سادہ لوح "عوام المسلمین" کو ہم اصالتاً by-default اشاعرہ یا ماتریدیہ نہیں مانیں گے۔

معاملے کی ترتیب یوں نہیں ہوگی کہ: ایک علاقہ کے عامۃ المسلمین عقیدہ کے کسی مخصوص "ورژن" پر مانے جائیں تاوقتیکہ ان میں سے کسی شخص کا، عقیدہ کے اُس مخصوص ورژن سے "دستبردار" ہو کر راہِ سنت پر آنا، پایۂ ثبوت کو نہ پہنچ لے!

بلکہ ترتیب یہ ہوگی کہ: یہ "عوام المسلمین" اپنی اسی فطرت پر سمجھے جائیں جوکہ راہِ سنت کے ساتھ سب سے بڑھ کر ہم آہنگ ہے (یعنی نصوص کا ایک بےساختہ مفہوم لینا)...تاوقتیکہ ان میں سے کسی شخص کا اِس فطرت سے "دستبردار" ہو کر عقیدہ کا کوئی مخصوص ورژن شعوری طور پر اختیار کر لینا پایۂ ثبوت کو نہ پہنچ لے۔

یہاں فیصلے لیبل نہیں کریں گے بلکہ وہ حقائق کریں گے جو لوگوں کے اذہان میں بےساختہ بولتے ہیں۔ پس ہمارا بہت سارا کام "فطرت" نے خود کر دیا ہوا ہے؛ لہٰذا یہ "عامۃ المسلمین" درحقیقت ہمارے ہیں اور ہم ان کے۔ خواہ ’لیبل‘ لگا رکھنے والے حضرات جو مرضی کہیں۔ یہ "عوام المسلمین" اللہ اور اُس کے رسول کی چیز ہیں  خواہ خیال کرنے والے ان کو کچھ بھی خیال کرتے پھریں۔

 

 

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت
اصول- منہج
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
اصول- عقيدہ
حامد كمال الدين
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت حامد کمال الدین اسے فی الحال آپ ایک ناقص استقر۔۔۔
شخصیات اور پارٹیوں کے ساتھ تھوک کا معاملہ نہ کرنا
اصول- منہج
تنقیحات-
حامد كمال الدين
پراپیگنڈہ وار propaganda war میں سیگ منٹیشن segmentation (جزء کاری) ناگزیر ہوتی ہے۔ یعنی معاملے کو ای۔۔۔
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار.. اور امت کا طائفہ منصورہ
اصول- عقيدہ
اداریہ-
حامد كمال الدين
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار..  اور امت کا طائفہ منصورہ حالات کو سرسری انداز میں پڑھنا... واقعات م۔۔۔
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز
احوال-
اصول- منہج
راہنمائى-
حامد كمال الدين
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز تحریر: حامد کمال الدین میری نظر میں، اس۔۔۔
رسالہ اصول سنت از امام احمد بن حنبلؒ
اصول- عقيدہ
اصول- منہج
ادارہ
رســـــــــــــــــــــالة اصولِ سنت از امام احمد بن حنبل اردو استفاده: حامد كمال الدين امام ۔۔۔
’خطاکار‘ مسلمانوں کو ساتھ چلانے کا چیلنج
اصول- منہج
تنقیحات-
حامد كمال الدين
’خطاکار‘ مسلمانوں کو ساتھ چلانے کا چیلنج سوال: ایک مسئلہ جس میں افراط و تفریط کافی ہو ر۔۔۔
واقعۂ یوسف علیہ السلام کے حوالے سے ابن تیمیہ کی تقریر
تنقیحات-
اصول- منہج
حامد كمال الدين
قارئین کے سوالات واقعۂ  یوسف علیہ السلام کے حوالے سے ابن تیمیہ کی تقریر ہمارے کچھ نہایت عزیز ۔۔۔
’’آسمانی شریعت‘‘ نہ کہ ’سوشل کونٹریکٹ‘۔۔۔ ’’جماعۃ المسلمین‘‘ بہ موازنہ ’ماڈرن سٹیٹ‘
اصول- منہج
حامد كمال الدين
تعلیق 12   [1]   (بسلسلہ: خلافت و ملوکیت، از ابن تیمیہ) ’’آسمانی شریعت‘‘ نہ کہ ’سوشل ۔۔۔
"کتاب".. "اختلاف" کو ختم اور "جماعت" کو قائم کرنے والی
اصول- منہج
حامد كمال الدين
تعلیق 11   [1]   (بسلسلہ: خلافت و ملوکیت، از ابن تیمیہ) ’’کتاب‘‘ ’’اختلاف‘‘ کو خت۔۔۔
ديگر آرٹیکلز
جہاد- دعوت
عرفان شكور
كامياب داعيوں كا منہج از :ڈاكٹرمحمد بن ابراہيم الحمد جامعہ قصيم (سعودى عرب) ضرورى نہيں۔۔۔۔ ·   ضرور۔۔۔
باطل- فرقے
Featured-
حامد كمال الدين
"المورد".. ایک متوازی دین حامد کمال الدین اصحاب المورد کے ہاں "کتاب" سے اگر عین وہ مراد نہیں۔۔۔
جہاد-
احوال-
Featured-
حامد كمال الدين
’دوحہ‘ اہل اسلام کی ’جنیوا‘ سے بڑی جیت، ان شاء اللہ حامد کمال الدین ہمیں ’’زیادہ خوش نہ ہونے۔۔۔
Featured-
حامد كمال الدين
اسلامی تحریک کا ’’مابعد تنظیمات‘‘ عہد؟ Post-organizations Era of the Islamic Movement یہ عن۔۔۔
حامد كمال الدين
باطل فرقوں کےلیے گنجائش پیدا کرواتے، دانش کے کچھ مغالطے   کچھ علمی چیزیں مانند (’’لازم المذھب لیس بمذھب‘۔۔۔
باطل- فرقے
حامد كمال الدين
شیعہ سٹوڈنٹ کے ساتھ دوستی، شادی بیاہ   سوال: السلام علیکم سر۔ یونیورسٹی میں ا۔۔۔
بازيافت- سلف و مشاہير
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
امارتِ حضرت معاویہؓ، مابین خلافت و ملوکیت نوٹ: تحریر کا عنوان ہمارا دیا ہوا ہے۔ از کلام ابن ت۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
سنت کے ساتھ بدعت کا ایک گونہ خلط... اور "فقہِ موازنات" حامد کمال الدین مغرب کے اٹھائے ہوئے ا۔۔۔
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
حامد كمال الدين
"انسان دیوتا" کے حق میں پاپ! حامد کمال الدین دین میں طعن کر لو، جیسے مرضی دین کے ثوابت ۔۔۔
بازيافت-
حامد كمال الدين
تاریخِ خلفاء سے متعلق نزاعات.. اور مدرسہ اہل الأثر حامد کمال الدین "تاریخِ خلفاء" کے تعلق س۔۔۔
باطل- اديان
حامد كمال الدين
ریاستی حقوق؛ قادیانیوں کا مسئلہ فی الحال آئین کے ساتھ حامد کمال الدین اعتراض: اسلامی۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
لفظ  "شریعت" اور "فقہ" ہم استعمال interchangeable    ہو سکتے ہیں ۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
ماتریدی-سلفی نزاع، یہاں کے مسلمانوں کو ایک نئی آزمائش میں ڈالنا حامد کمال الدین ایک اشع۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
منہجِ سلف کے احیاء کی تحریک میں ’مارٹن لوتھر‘ تلاش کرنا! حامد کمال الدین کیا کوئی وجہ ہے کہ۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
      کشمیر کاز، قومی استحکام، پختہ اندازِ فکر کی ضرورت حامد ۔۔۔
تنقیحات-
مشكوة وحى- علوم حديث
حامد كمال الدين
اناڑی ہاتھ درایت! صحیح مسلم کی ایک حدیث پر اٹھائے گئے اشکال کے ضمن میں حامد کمال الدین ۔۔۔
راہنمائى-
حامد كمال الدين
(فقه) عشرۃ ذوالحج اور ایامِ تشریق میں کہی جانے والی تکبیرات ابن قدامہ مقدسی رحمہ اللہ کے متن سے۔۔۔
تنقیحات-
ثقافت- معاشرہ
حامد كمال الدين
کافروں سے مختلف نظر آنے کا مسئلہ، دار الکفر، ابن تیمیہ اور اپنے جدت پسند حامد کمال الدین دا۔۔۔
کیٹیگری
Featured
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
سلف و مشاہير
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
حامد كمال الدين
ادارہ
مزيد ۔۔۔
باطل
فرقے
حامد كمال الدين
فرقے
حامد كمال الدين
فكرى وسماجى مذاہب
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
معاشرہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
خواتين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
جہاد
دعوت
عرفان شكور
حامد كمال الدين
مزاحمت
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم حديث
حامد كمال الدين
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز