عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Sunday, December 8,2019 | 1441, رَبيع الثاني 10
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
2014-07 آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
بعد از نزول عیسیٰ کی جائے تدفین کا مسئلہ؟
:عنوان

:کیٹیگری
اسماعيل ابراہيم :مصنف

بعد از نزول عیسیٰ کی جائے تدفین کا مسئلہ؟

اسماعیل ابراہیم[1]

یہ مضمون دینے کا مقصد صرف یہ ہے کہ عامتہ الناس پر واضح کر دیا جائے کہ چند اصحاب رائے کے خیال کے برعکس ، عیسیٰ﷣ کی جائے تدفین ، عقیدہ کا مسئلہ نہیں ۔ مولف نے اس موضوع پر یہی ابہام دور کرنے کی غرض سے قلم اٹھایا ہے ۔

نا معلوم وجوہات کی بنیاد پر کچھ لوگ اس مفروضے پر یقین رکھتے ہیں کہ حضرت عیسی﷣ وفات کے بعد نبیﷺ، حضرت ابوبکر﷛ اور حضرت عمر ﷛ کی ہمسائیگی میں دفنائے جائیں گے- بعضوں کے نزدیک يہ عقيدہ تواتر سے ثابت ہے تاہم یہ بات بالکل درست نہیں- اس مکتب فکر کی بنیاد جن تین يا چار مفروضوں پر رکھی گئی ان کو مختصرا بیان کرنے کے بعد ان شاء اللہ یہ بات ثابت کى جائے گى کہ یہ بات تحقیقی بلکہ عقلی لحاظ سے لغو اور مہمل ہے-

1:             پہلی دلیل تو ترمذی شریف میں مذکور مشہور سابق یہودی عالم حضرت عبد اللہ بن سلام رضى اللہ عنہ کی روایت سے لی جاتی ہے جو آپ عليہ السلام کے ہاتھوں پر ایمان لائے تھے – اس روایت کے مطابق حضرت عبد اللہ بن سلام﷛ فرماتے ہیں کہ بعد وفات حضرت عیسی﷣ نبی اکرم عليہ السلام کی ہمسائیگی میں دفنائے جائیں گے، مگر ساتھ ہی وہ وضاحت کرتے ہیں کہ یہ بات تورات کے حوالے سے ہے- اگر چہ حدیث کی کچھ دوسری کتابوں میں یہ روایت اس وضاحت کے بغیر بھی آئی ہے مگر وہاں بھی محققین نے سمجھا کہ اس سے مراد تورات ہی ہے – اب شریعت کا اصول ہے کہ چونکہ تورات سے ثابت ہونے والی تمام روایات کا شمار اسرائیلیات میں ہوتا ہے، جن کے بارے میں توقف کا موقف اپنايا جائے گا، يعنى نفى اور اثبات دونوں مناسب نہیں – ليکن يہ بات جب ہے جب کہ تورات تک اسناد صحيح ہو، مگر حقيقت يہ ہے کہ عبد اللہ بن سلام رضى اللہ عنہ تک سند میں کئی مجہول راوى ہيں، لہذا اس اسرائیلی روايت کا اصلى تورات ميں وجود خود سخت ضعیف ومشکوک ہے –

2:            دوسرى دلیل امام ابن جوزی کی کتاب الوفاء میں اور دوسرى کتابوں ميں درج حضرت عبد اللہ بن عمر رضى اللہ عنہ کى ايک لمبى حدیث پیش کی جاتی ہے جس میں يہ مضمون ہے کہ آپ عليہ السلام نے فرمایا کہ عیسی بن مریم کا دو بارہ نزول ہوگا اور بعد وفات عیسی عليہ السلام میرے ہمراہ دفنائے جائیں گے – اب اس حدیث کی سند بھی نہایت ضعیف ہے، خود امام ابن جوزی نے اپنى کتاب العلل میں اور امام ذھبی نے اپنى کتاب المیزان میں اس کے راویوں میں شامل ایک افریقی راوى کو سخت ناقابل اعتبار ٹھہرایا ہے -

http://www.ahlalhdeeth.com/vb/showthread.php?t=28744

 3:            تيسرى دلیل تاریخ مدینۃ دمشق سے ہے جس میں امام ابن عساکر بیان کرتے ہیں کہ ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضى اللہ عنہا نے آنحضرت عليہ السلام سے وفات کے بعد ان کے نزدیک دفن ہونے کی خواہش کا اظہار کیا تھا، مگر آپ عليہ السلام نے اجازت نہ دیتے ہوئے وضاحت کی تھی کہ چار شخص یعنی نبی اکرم عليہ السلام، حضرت عیسی عليہ السلام، حضرت ابو بکر رضى اللہ عنہ اور حضرت عمر رضى اللہ عنہ کی تدفین کے بعد اس جگہ میں اور کسی کی گنجائش نہیں ہوگی – اب اس قصے کے راوی محمد عمری غير موثوق ہے، اور حافظ ابن حجر عسقلانى نے اپنى کتاب فتح البارى میں کہا کہ يہ روايت غير ثابت ہے -

http://goo.gl/0urC4Z

4:             چوتھی دلیل مشہور تابعی امام سعید بن مسیب کا نام جن کے مطابق خالی چوتھی جگہ حضرت عیسی کا مدفن ہوگی – ليکن ان تک اس روایت کا سلسلہ حافظ ابن حجر عسقلانى کے نزديک کمزور ہے -

http://www.ahlalhdeeth.com/vb/showthread.php?t=28744

اب ہم ان قوی دلائل کی طرف آتے ہیں، جن کی بنیاد پر اس مفروضہ کی تردید کی جا سکتی ہے:

1:             قرآن کریم کی سورت لقمان آیت 34 (وَمَا تَدْرِي نَفْسٌ بِأَيِّ أَرْضٍ تَمُوتُ) کے مطابق کوئی شخص اپنی جائے وفات کا پیشگی علم نہیں رکھتا – چناچہ آپ عليہ السلام کو بھی اپنی جائے وفات وتدفین کا علم نہ تھا – اس چیز کو مد نظر رکھتے ہوئے وہ تمام روایات جن کی رو سے حضور عليہ السلام نے خود حضرت عائشہ کو اپنے قریب دفن ہونے کی اجازت نہ دی تھی، غلط اور ضعیف ٹھہرتی ہیں، اس لئے ان روايات سے يہ بات لازم آتى ہے کہ حضور عليہ السلام کو مدينہ میں وفات ہونے کا سابق علم تھا-

 2:            امام مالک اپنی موطا کى بلاغات میں اور کئی دیگر علماء نے واضح طور پر بیان کيا کہ نبی اکرم عليہ السلام کی وفات کے بعد آپ عليہ السلام کی تدفین کے بارے میں صحابہ کرام رضوان اللہ تعالیٰ علیھم میں اختلاف تھا جس کو بعد میں حضرت ابو بکر رضى اللہ عنہ نے دور کیا – امام ابن عبد البر﷫ نے اس باہمى اختلاف کو صحيح ٹھہرایا ہے – اب اگر اصحاب کو یہ علم ہوتا کہ نبی اکرم عليہ السلام وفات کے بعد مدينہ میں اور حضرت عائشہ صدیقہ رضى اللہ عنہا کہ حجرہ میں حضرت عیسی عليہ السلام کے ساتھ دفن ہونے والے ہیں تو کبھی بھی اختلافات سر نہ اٹھاتے – حضرت ابو بکر رضى اللہ عنہ نے آپ عليہ الصلوٰۃ و السلام کو جب حجرہ میں دفنانے کا فیصلہ کیا تو اس کی وجہ بھی ایک دوسرى صحیح حديث کى بناء پر کى تھی، نہ کہ اس عقيدہ کى بناء پر-

3:             اسی طرح فاروق اعظم رضى اللہ عنہ نے مجوسی غلام کے ہاتھوں اپنی شہادت سے قبل دو مرتبہ شدید زخمی کى حالت میں حضرت عائشہ صدیقہ رضى اللہ عنہا سے ان کے حجرہ میں دفن ہونے کی باقاعدہ اجازت طلب کی تھی، جسے عائشہ صدیقہ رضى اللہ عنہا نے دونوں مرتبہ منظور فرمایا تھا – اس واقعہ کا ذکر امام ابن کثیر نے اپنی تصنیف البدایہ والنہایہ میں کیا ہے- اب اگر پہلے سے ہی ایسی مستند احادیث موجود ہوتیں کہ حجرہ میں آخرى دو نبى اور شیخين دفنائے جائیں گے تو حضرت عمر رضى اللہ عنہ کو کبھی بھی اجازت لينے کى نوبت نہ آتی بلکہ وہ ام المومنین کو حکم دیتے اور حضرت عائشہ رضى اللہ عنہا کو فرمان نبوی عليہ السلام کی تعمیل میں انہیں جگہ دینی ہی پڑتی -

 4:            تاریخ میں آتا ہے کہ حضرت عائشہ رضى اللہ عنہا خود بھی حجرہ میں دفن ہونے کی خواہش مند تھیں – امام حاکم نے مستدرک میں ايک روايت بیان کی جس کو امام ذہبى نے صحيح قرار ديا کہ چونکہ حضرت عائشہ رضى اللہ عنہا کو جنگ جمل میں اپنے کردار پر گہری ندامت وپشیمانی تھی لہذا وہ ہزار خواہش کے باوجود نبی عليہ السلام کے قریب دفن ہونے سے گھبراتی تھیں – حالانکہ وہ جگہ برس ہا برس سے ان کا ذاتی گھر تھا – تاہم ندامت کے اس گہرے احساس کے ہاتھوں مجبور ہو کر زندگی کے آخری دنوں میں انہوں نے حجرہ سے چند سو گز کے فاصلے پر بقیع غرقد میں دیگر مدنى امہات المومنین کے ساتھ دفنائے جانے کی خواہش ظاہر کی تھی – اس خواہش کے اعتبار سے قطعی طور پر پچھلی احادیث ضعیفہ میں درايتى اعبتار سے اور مزيد ضعف لازم آتا ہے، کیونکہ اگر حضرت عائشہ رضى اللہ عنہا کو پہلے سے حضرت عیسی عليہ السلام کے دفن کے بارے ميں علم ہوتا تو وہ کبھی بھی نبی عليہ السلام کے ساتھ ميں دفن نہ ہونے کے غم کا شکار نہ ہوتیں -

مختصر قصہ يہ ہے کہ حضرت عیسی عليہ السلام کی جائے تدفین کا علم صرف اللہ رب العالمین کو ہے – جو لوگ اس بات کے قائل ہیں کہ دفن کى جگہ شريعت وعقيدہ کى رو سے ايک قطعى بات ہے اور علم حديث کے لحاظ سے متواتر ہے جس میں کسى قسم کے اختلاف کى گنجائش نہیں وه بالکل غلط ہیں- ايسے لوگوں کى علمى اصلاح حکمت کے ساتھ جائز ہے – مگر اگر مستقبل میں حضرت عیسی عليہ السلام کو وفات کے بعد نبی عليہ السلام کے پہلو میں دفن کر بھی دیا جائے تب بھی وہ تمام روایات صحیح نہیں قرار دی جائیں گی، جو علم حدیث کی رو سے ضعیف ہیں – حدیث کے ائمہ کا فتوى ہے کہ اگر حادثات زمانہ سے کوئی ایسی ضعیف حدیث کا متن وموضوع واقعى طور پر درست ثابت ہو جائے تو وہ پھر بھى صحيح نہیں سمجھی جا سکتى، جيسا کہ تجربہ، خواب، الہام يا ديگر غير معتبر طريقوں کى بناء پر کسى حديث کو صحيح، ضعيف يا موضوع نہیں قرار ديا جا سکتا –

[1]   مؤلف کا تعارف:

اسماعیل ابراہیم صاحب برطانیہ میں مقیم ہیں۔ انہوں نے قرآن حفظ کرنے کے بعد برطانیہ کى درس نظامى کى مشہور درسگاہ، دار العلوم ڈیوزبری (Darul Uloom Dewsbury) میں چھ سال دینی تعلیم حاصل کی۔ بعد ازاں مدینہ کی جامعہ اسلامیہ میں کلیۃ الشریعہ سےامتیازی سند کے ساتھ فارغ التحصیل ہوئے۔ اسکے بعد لندن یونیورسٹی سے قانون میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی اور آج کل وہیں سے اصول فقہ میں پی ایچ ڈی مکمل کر رہے ہیں۔

اسماعیل صاحب مولف اور مترجم ہیں۔ عربی صَرف پر انکی ایک کتاب اردو زبان میں بہار، ہندوستان سے شائع ہو چکی ہے۔ حال ہی میں انکا فقہ حنفیہ کی مشہور کتاب ‘مختصر القدوری’ کا انگریزى ترجمہ بھی ترکی سے شائع ہو چکا ہے۔

فروعی مسائل میں پائی جانے والی افراط وتفریط کو مٹانا اور آدابِ اختلاف کا تعارف کروانا آپ کا خصوصی میدان ہے۔ اسی سلسلہ میں قیام رمضان کے مسائل اور تقلید مطلق وشخصی کے مابین موجودہ متشدد آراء پر تحقیق کا کام جارى ہے۔ آپ کا ہدف مختلف مذاہب کے مسلمانوں کے مابین مفاہمت کو فروغ دینا ہے۔ اور اس بارے میں اہل سنت کے دو اہم برصغیری بلکہ عالمى تحریکى طبقے – دیوبندی اور سلفى حضرات – کے تقارب کی سعی آپ کا مقصود ہے۔

اسماعیل ابراہیم فقہی اعتبار سے حنفى المذہب، عقیدے کے مسائل میں سلف کے پیروکار ہیں اور بالخصوص امام احمد ابن حنبل رحمہ اللہ کے منہج پر ہیں۔ اہل کلام حضرات کی فلسفیانہ موشگافیوں کے سخت مخالف ہیں۔

علاوہ ازیں، اسماعیل صاحب جہاں موجودہ دور میں ہر سطح پر نمودار ہونے والے فکری خلفشار، ذہنى فتنوں، عقائدى پیچیدگیوں اور نتیجہ خیزعصری مباحث میں خاص دلچسپی رکھتے ہیں وہاں اصول سے متعلق ان روایتی مسائل کی گتھیاں سلجھانے پر بھی بہت زور دیتے ہیں جس سے مخلص عوام الناس کے شکوک واوہام دور ہو سکیں۔

اسماعیل ابراہیم صاحب ڈیوزبری، برطانیہ میں اپنی اہلیہ اور دو بچوں کے ساتھ مقیم ہیں۔ ان کے والدین کا تعلق ہندوستان میں گجرات کے ضلع سورت سے ہے۔

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
ديگر آرٹیکلز
بازيافت- سلف و مشاہير
Featured-
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
امارتِ حضرت معاویہؓ، مابین خلافت و ملوکیت نوٹ: تحریر کا عنوان ہمارا دیا ہوا ہے۔ از کلام ابن ت۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
سنت کے ساتھ بدعت کا ایک گونہ خلط... اور "فقہِ موازنات" حامد کمال الدین مغرب کے اٹھائے ہوئے ا۔۔۔
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
Featured-
حامد كمال الدين
"انسان دیوتا" کے حق میں پاپ! حامد کمال الدین دین میں طعن کر لو، جیسے مرضی دین کے ثوابت ۔۔۔
Featured-
بازيافت-
حامد كمال الدين
تاریخِ خلفاء سے متعلق نزاعات.. اور مدرسہ اہل الأثر حامد کمال الدین "تاریخِ خلفاء" کے تعلق س۔۔۔
Featured-
باطل- اديان
حامد كمال الدين
ریاستی حقوق؛ قادیانیوں کا مسئلہ فی الحال آئین کے ساتھ حامد کمال الدین اعتراض: اسلامی۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
لفظ  "شریعت" اور "فقہ" ہم استعمال interchangeable    ہو سکتے ہیں ۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
ماتریدی-سلفی نزاع، یہاں کے مسلمانوں کو ایک نئی آزمائش میں ڈالنا حامد کمال الدین ایک اشع۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
منہجِ سلف کے احیاء کی تحریک میں ’مارٹن لوتھر‘ تلاش کرنا! حامد کمال الدین کیا کوئی وجہ ہے کہ۔۔۔
Featured-
احوال-
حامد كمال الدين
      کشمیر کاز، قومی استحکام، پختہ اندازِ فکر کی ضرورت حامد ۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
مشكوة وحى- علوم حديث
حامد كمال الدين
اناڑی ہاتھ درایت! صحیح مسلم کی ایک حدیث پر اٹھائے گئے اشکال کے ضمن میں حامد کمال الدین ۔۔۔
راہنمائى-
حامد كمال الدين
(فقه) عشرۃ ذوالحج اور ایامِ تشریق میں کہی جانے والی تکبیرات ابن قدامہ مقدسی رحمہ اللہ کے متن سے۔۔۔
تنقیحات-
ثقافت- معاشرہ
حامد كمال الدين
کافروں سے مختلف نظر آنے کا مسئلہ، دار الکفر، ابن تیمیہ اور اپنے جدت پسند حامد کمال الدین دا۔۔۔
اصول- منہج
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
اصول- عقيدہ
حامد كمال الدين
ایک ٹھیٹ عقائدی تربیت ہماری سب سے بڑی ضرورت حامد کمال الدین اسے فی الحال آپ ایک ناقص استقر۔۔۔
ثقافت- خواتين
ثقافت-
حامد كمال الدين
"دردِ وفا".. ناول سے اقداری مسائل تک حامد کمال الدین کوئی پچیس تیس سال بعد ناول نام کی چیز ہاتھ لگی۔ وہ۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
امارات کا سعودی عرب کو یمن میں بیچ منجدھار چھوڑنے کا فیصلہ حامد کمال الدین شاہ سلمان کے شروع دنوں میں ی۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
پاک افغان معاملہ.. تماش بینی نہیں سنجیدگی حامد کمال الدین وہ طعنے جو میرے کچھ مخلص بھائی او۔۔۔
احوال-
حامد كمال الدين
کلچرل وارداتیں اور ہماری عدم فراغت! حامد کمال الدین ظالمو! نہ صرف یہاں کا منبر و محراب ۔۔۔
احوال-
ادارہ
تحریر:   تحریم افروز یوں تو امریکا سے مسلمانوں  کے معاملے میں کبھی خیر کی توقع رہی ہی&۔۔۔
کیٹیگری
Featured
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
سلف و مشاہير
شيخ الاسلام امام ابن تيمية
حامد كمال الدين
ادارہ
مزيد ۔۔۔
باطل
فكرى وسماجى مذاہب
حامد كمال الدين
اديان
حامد كمال الدين
فكرى وسماجى مذاہب
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
معاشرہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
خواتين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
جہاد
مزاحمت
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم حديث
حامد كمال الدين
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز