عربى |English | اردو 
Surah Fatiha :نئى آڈيو
 
Friday, November 16,2018 | 1440, رَبيع الأوّل 7
رشتے رابطہ آڈيوز ويڈيوز پوسٹر ہينڈ بل پمفلٹ کتب
شماره جات
  
 
  
 
  
 
  
 
  
 
تازہ ترين فیچر
Skip Navigation Links
نئى تحريريں
رہنمائى
نام
اى ميل
پیغام
2013-04 apniJamhuriat آرٹیکلز
 
مقبول ترین آرٹیکلز
’اسلامی جمہوریت‘ کا فلسفہ!
:عنوان

امام ابن تیمیہؒ فرماتے ہیں: دنیا کا کوئی باطل ایسا ہے ہی نہیں جس میں کچھ نہ کچھ حق نہ پایا جاتا ہو کیونکہ حق تعالیٰ نے جس سلیم فطرت پر انسان کی تخلیق فرمائی ہے وہ کسی باطلِ محض پر فریفتہ ہونا جانتی ہی نہیں

. باطل :کیٹیگری
حامد كمال الدين :مصنف

فصل 2 کتابچہ: ’’اپنی جمہوریت یہ تو دنیا نہ آخرت‘‘

پچھلی نصف صدی سے ہمیں ’جمہوریت‘ کے کولہو میں جوت رکھنے والے حضرات یہاں ایک نکتہ لےکر آتے ہیں:

’صاحب اپنے یہاں جو جمہوریت پائی جاتی ہے آپ خوامخواہ اسے مغربی جمہوریت سمجھ بیٹھے، حالانکہ یہ تو اسلامی جمہوریت ہے‘!

’ڈیموکریسی‘ ایک عالمی حوالہ ہے۔ اِس کا ایک معروف تاریخی پس منظر ہے۔ نظریات کی دنیا میں یہ لفظ کچھ مخصوص معانی اور مفہومات ادا کرنے کےلیے وضع ہوا ہے۔ دنیا کے کسی فورم پر جب آپ ’ڈیموکریسی‘ بول کر آتے ہیں تو جہان بھر کے صحافی، دانشور، نقاد، ادیب،  مفکرین اِس سے ایک مخصوص مطلب ہی لیتے ہیں۔ اِس میں ذرہ بھر شک نہیں  کہ سیاسیات کے باب میں ’ڈیموکریسی‘ عین اُسی طرح ایک (باقاعدہ) نظریہ اور نظام ہے  جس طرح معاشیات کے باب میں ’سوشلزم‘ یا ’کیپٹل ازم‘۔ ایسے کسی بھی ’ازم‘ یا ’کریسی‘ کے ساتھ ’اسلامی‘ کا جوڑ لگانا درحقیقت مضحکہ خیز ہے۔ اس کی ایک نہایت سادہ وجہ ہے جو ہم آپ کی خدمت میں عرض کردیتے ہیں:

دنیا کے یہ جتنے ’ازم‘ اور ’کریسیاں‘ ہیں... ان کا اصل مدمقابل روئے زمین پر اگر کوئی تھا اور ہے تو وہ ’’اسلام‘‘ ہی ہے۔ انسانی زندگی کو چلانے کا دعویٰ لےکر اٹھنے والا ایک نظریہ اور نظام ہونے کے ناطے ’ڈیموکریسی‘ اور ’سوشل ازم‘ اور ’کیپٹل ازم‘ وغیرہ کی جنگ دنیا میں کسی سے تھی تو وہ اسلام سے تھی۔ یہی جنگ جوکہ عالمی منظرنامے پر اسلام کو ایک طویل عرصے سے درپیش ہے آج اپنی انتہا کو جاپہنچی اور چیخ چیخ کر صلائے عام دینے  لگی ہے، مگر ہم ہیں کہ شاید اس کو توجہ دینے پر تیار نہیں۔ اس میں ذرہ بھر مبالغہ نہیں، تاریخ کے ’مذہبی‘ ادوار[1] میں اسلام کو جس قدر پالا ’عیسائیت‘ اور ’یہودیت‘ اور ’ہندومت‘ سے تھا آج کے اِن ’غیرمذہبی‘ ادوار[2] میں اسلام کو اُسی قدر پالا ’سوشل ازم‘ اور ’کیپٹل ازم‘ اور ’ڈیموکریسی‘ سے ہے۔ اسلام وہ واحد دین ہے جو (معروف معنوں میں)[3] انسانی زندگی کے ’مذہبی‘ جوانب پر بھی پورا اترتا ہے اور ’غیرمذہبی‘ جوانب پر بھی۔ اس لیے اسلام کا تقابل جس قدر عیسائیت اور یہودیت اور ہندومت ایسے ’مذہبی‘ ادیان سے ہے اُسی قدر اسلام کا تقابل سوشل ازم، کیپٹل ازم اور ڈیموکریسی ایسے ’سماجی‘ ادیان سے ہے۔اس پر آپ کو تعجب ہوتا ہے تو وہ صرف اِس وجہ سے کہ اسلام کو آپ ’مذہب‘ کے خانے میں رکھنے کے عادی ہیں اور ’’دین‘‘ کے طور پر لینا بڑی دیر سے ترک فرماچکے ہیں۔ورنہ جس قدر بامعنی آپ کی نظر میں ’’اسلام بہ مقابلہ عیسائیت‘‘ یا ’’اسلام بہ مقابلہ مجوسیت‘‘ یا ’’اسلام بہ مقابلہ ہندومت‘‘ ہوسکتا تھا اُسی قدر بامعنیٰ ’’اسلام بہ مقابلہ سوشل ازم‘‘ اور ’’اسلام بہ مقابلہ کیپٹل ازم‘‘ اور ’’اسلام بہ مقابلہ ڈیموکریسی‘‘ ہونا چاہئے تھا۔’’دین‘‘ کا یہ تصور آپ پر واضح ہوتا تو یقیناً آپ مانتے کہ اسلام کی مڈھ بھیڑ آج ہے ہی ’’اشتراکیت‘‘ اور ’’سرمایہ داری‘‘ اور ’’جمہوریت‘‘ وغیرہ ایسے (ماڈرن) ادیان کے ساتھ۔ تب ’’اسلام اور اشتراکیت‘‘ یا ’’اسلام اور جمہوریت‘‘ کے مابین مشترک نکات نکال نکال کر دکھانے کی بجائے آپ اِن کی اِس جنگ میں فریق بننے کےلیے بےچین ہوتے؛ کہ دورِحاضر میں حق وباطل کا سب سے بڑا معرکہ یہی تھا۔ تب جتنا تعجب آپ کو ’اشتراکی سرمایہ دار‘ یا ’سرمایہ پرست اشتراکی‘ یا مودودی صاحبؒ کے الفاظ میں ’گوشت خور ویجی ٹیرئن‘ ایسی ایک بیہودہ ترکیب سن کر ہوتا اتنی ہی حیرت آپ ’اسلامی جمہوریت‘ ایسی انہونی ترکیب پر ظاہر فرماتے۔ اس صورت میں یہ اشکال بھی ہرگز آپ کے ہاں جگہ نہ پاتا کہ صاحب ’’اسلام اور اشتراکیت کے مابین‘‘ یا ’’اسلام اور جمہوریت کے مابین‘‘ بہت سی جگہوں پر مماثلت بھی تو آخر پائی جاتی ہے! بعینہٖ جس طرح اِس اشکال کی آپ کے ہاں کوئی گنجائش نہیں کہ ’’اسلام اور عیسائیت کے مابین‘‘ یا ’’اسلام اور یہودیت کے مابین‘‘ بہت سے مقامات پر مماثلت پائی جاتی ہے، بہت سے معاملات میں ’’اسلام اور عیسائیت‘‘ کا یا ’’اسلام اور یہودیت‘‘ کا موقف ہوبہو ایک ہے؛ لہٰذا ’عیسائی اسلام‘ یا ’اسلامی عیسائیت‘ یا ’اسلامی یہودیت‘ ایسی کوئی ترکیب بھی دنیا کے اندر نکال لائی جائے! صاف سی بات ہے ہر باطل نظریہ، نظام یا مذہب ایک کُل کا نام ہے اور ان میں سے ہر ایک کا کچھ نہ کچھ اشتراک اسلام کے ساتھ لازماً ہوگا۔ امام ابن تیمیہؒ فرماتے ہیں: دنیا کا کوئی باطل ایسا ہے ہی نہیں جس میں کچھ نہ کچھ حق نہ پایا جاتا ہو کیونکہ حق تعالیٰ نے جس سلیم فطرت پر انسان کی تخلیق فرمائی ہے وہ کسی باطلِ محض پر فریفتہ ہونا جانتی ہی نہیں؛ اس کو رجھانے کےلیے لازم ہے کہ آپ حق ہی کی کوئی بات لےکر آئیں اور پھر اس کے ساتھ باطل کا پورا ایک تانا بُن دیں۔ پس اِس معنیٰ میں انسانی فطرت حق پرست ہے؛ لہٰذا حق کی ایک گونہ آمیزش ہر باطل نظریہ، نظام اور مذہب کی مجبوری۔ چنانچہ جہاں تک اتباع کرنے کا تعلق ہے تو اس کےلیے آپ کو مطلق حق درکار ہے؛ اور جوکہ آج کے دور میں صرف شرعِ محمدؐ سے دستیاب ہے۔ البتہ رد کرنے کےلیے ایک چیز کا مطلق باطل ہونا ضروری نہیں؛ ایک نظریے یا نظام یا مذہب میں اگر کچھ بھی باطل ہے تو وہ رد ہوگا؛ اور وہاں اس کے ’اسلام کے ساتھ مشترک نکات‘ کا اعتبار کرکے اسلام اور اُس  کے مابین بیچ کی راہ نہیں نکالی جائے گی۔ یوں ایک مذہب کے ’جزوی‘ طور پر حق ہونے کے باوجود اور یوں اسلام کے ساتھ اُس کے ’جزوی اشتراک‘ رکھنے کے علی الرغم، اسلام اور اُس کا تصادم ہی پیش نظر رکھا جائےگا نہ کہ اسلام کے ساتھ اُس کی مماثلت۔ پس بےلحاظ اس سے کہ ایک مذہب، ایک نظریے یا ایک نظام میں کتنے فیصد حق ہے اور کتنے فیصد باطل... وہ ایک اکائی کے طور پر ہی لیا جائے گا؛ اور جب اسلام کے ساتھ کسی ایک بھی پہلو سے اُس کا تصادم ثابت ہوجائے تو وہ پورے کا پورا رد ہوجائے گا۔ یہ اصول اگر ختم ہوجاتا ہے تو دنیا میں کوئی نظریہ، نظام یا مذہب ایسا نہیں رہ جاتا جس کو رد کرایا جائے ۔ تب ہر چیز اجزاء میں تقسیم ہوگی اور ایک نظریہ، نظام یا مذہب کلیتاً رد ہونے کی بجائے محض اُس کا سپیئرپارٹ بدلا جائے گا؛ جس کے بعد وہ باطل نظریہ، نظام یا مذہب نہ صرف قبول ہوگا بلکہ جہان میں ہم اُس کے داعی اور علمبردار بن کر اٹھیں گے!

*****

یہ ہوئی اِس مسئلہ کی اصولی بنیاد۔ بنابریں، ڈیموکریسی کو ’مغربی‘ اور ’اسلامی‘ میں تقسیم کرنے کا فلسفہ بنیاد سے غلط ہے۔

’اسلامی‘ جمہوریت کو مفروضوں اور خوابوں کے اندر تلاش کرنا بھی یوں تو غلط ہے، اور اس کی وجہ ہم اوپر بیان کرآئے،  لیکن کوئی اگر آپ کو یہ مژدہ سنائے  کہ’اسلامی جمہوریت‘ نامی کوئی چیز بالفعل دنیا میں پائی جانے لگی ہے تو یہ بات کسی لطیفے کے طور پر ہی سننی چاہئے۔ پھر اگر وہ یہ بھی انکشاف کرے کہ جمہوریت کی یہ ’اسلامی‘ قسم ہمارے اپنے ہی ملک میں دریافت کرلی گئی ہے تو اسے لطیفے کی کوئی آخری قسم کہنا چاہیے! اِس کا کچھ بیان ہم آئندہ فصول میں کریں گے۔

 

 



[1]  تاریخ کے ’مذہبی‘ ادوار سے مراد: جب معاشرے دنیا میں اپنی پہچان ’عیسائی‘، ’یہودی‘، ’ہندو‘ معاشرہ اور ’’مسلم معاشرہ‘‘ کے طور پر کراتے تھے۔

[2]  حالیہ ’غیرمذہبی ادوار‘ سے مراد: جب معاشرے اپنی پہچان ’اشتراکی‘، ’سرمایہ داری‘، ’جمہوری‘ معاشرے کے طور پر کراتے ہیں، ان کے مقابلے پر آج بھی ہمیں اپنی پہچان ’’مسلم معاشرہ‘‘ کے طور پر کرانی تھی (کیونکہ ہماری یہی واحد پہچان قیامت تک کےلیے ہے هُوَ سَمَّاكُمُ الْمُسْلِمِيْنَ)، مگر نہ کراسکے، تب نہ آسمان سے نصرت آئی اور نہ زمین سے فراوانی ملی، سوائے ذلت، خوف اور بھوک کے جس کی کوئی حد تھی نہ حساب۔ زمینی نظریوں اور نظاموں کے مقابلے پر آپ اپنی خالص آسمانی پہچان ہی نہ کراپائیں تو خدا سے کس چیز کی امید رکھیں گے؟!

[3]  اردو میں ’مذہب‘ کا لفظ آج عین وہ معنیٰ ادا کرتا ہے جو انگریزی میں ’ریلیجئن‘ یا ہندی میں ’دھرم‘ کا لفظ۔ یعنی کچھ غیبی (metaphysical) عقائد، کچھ شعائرِعبادت (rituals)، نیز غمی خوشی اور کھانے پینے وغیرہ کے چند کوڈز اور کچھ گنے چنے تہوار۔ ’مذہب‘ کا دائرہ ہی جب یہ ہے؛ لہٰذا انسانی زندگی کے جوانب مانند سیاسیات، معاشیات، تعلیم، ثقافت، جہانبانی، صلح وجنگ، ڈپلومیسی وغیرہ کو ’غیرمذہبی‘ خانوں میں رکھ کر دیکھا جاتا ہے۔ البتہ ’’دین‘‘ آپ جس چیز کو کہتے ہیں اُس میں انسانی زندگی کے یہ سب جوانب آتے ہیں۔ یعنی ’’دین‘‘ آج کے معروف معنوں میں ’مذہبی‘ معاملات کو بھی شامل ہے اور ’غیرمذہبی‘ معاملات کو بھی۔ تاریخ کی اِن آخری صدیوں میں یورپی معاشرے اور پھر ان کی دیکھادیکھی دنیا کے تقریباً سبھی معاشرے ’مذہب‘ کی سیادت کا انکار کرتے ہوئے اپنے آپ کو ’غیرمذہبی‘ معاشرے ڈیکلیئر کرچکے ہیں اور ’’دین‘‘ کے غیرمذہبی جوانب کو ہی اپنی مرکزیت کی بنیاد اور اپنی اجتماعی شناخت قرار دے چکے ہیں۔ چنانچہ عیسائیت، مجوسیت، ہندومت وغیرہ آج ’’فرد‘‘ کا دین ہیں البتہ ڈیموکریسی، ہیومن ازم، سوشل ازم اور کیپٹل ازم وغیرہ ’’معاشرے‘‘ کا دین ہیں۔

Print Article
Tagged
متعلقہ آرٹیکلز
کچھ مسلم معترضینِ اسلام!
Featured-
باطل- جدال
حامد كمال الدين
کچھ ’مسلم‘ معترضینِ اسلام! تحریر: حامد کمال الدین پچھلے دنوں ایک ٹویٹ میرے یہاں سے  ہو۔۔۔
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر
Featured-
ثقافت- خواتين
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر اجالا عثمان انٹرنیٹ سے لی گئی ایک تحریر جو ہمیں ا۔۔۔
غامدى اور عصر حاضر ميں قتال
باطل- فرقے
اعتزال
ادارہ
ایک فیس بکی بھائی نے غامدی صاحب کی جہاد کے موضوع پر ویڈیو کا ایک لنک دے کر درخواست کی تھی کہ میں اس ویڈیو کو ۔۔۔
زیادتی زیادتی میں فرق ہے
باطل- فرقے
احوال- وقائع
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ایک بڑی خلقت واضح واضح اشیاء میں بھی فرق کرنے کی روادار نہیں۔ مگر تعجب ہ۔۔۔
دین پر کسی کا اجارہ نہ ہونا.. تحریف اور من مانی کےلیے لائسنس؟
باطل- كشمكش
حامد كمال الدين
تحریر: حامد کمال الدین کہتا ہے میں اوپن ایئر میں کیمروں کے آگے جنازے کی اگلی صف کے اندر ۔۔۔
اب اس کےلیے اہلِ دین آپس میں الجھیں!؟
احوال-
باطل- شخصيات و انجمنيں
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ’’تنگ نظری‘‘ کی ایک تعریف یہ ہو سکتی ہے کہ: ایک چیز جس کی دین میں گنجائش۔۔۔
شرک کے تہواروں پر مبارکباد دینے والے حضرات کے دلائل، ایک مختصر جائزہ
باطل- اديان
شیخ خباب بن مروان الحمد
شرک کے تہواروں پر مبارکباد دینے والے حضرات کے دلائل، ایک مختصر جائزہ تحریر: شیخ خباب بن مروان ا۔۔۔
دیوالی کی مٹھائی
باطل- اديان
حامد كمال الدين
دیوالی کی مٹھائی تحریر: سرفراز فیضی(داعی: صوبائی جمعیت اہل حدیث ممبئی ) *سوال*: کیا دیوالی کی مبارک باد دینا ۔۔۔
بائیکاٹ کا ہتھیار.. اور قومی یکسوئی کا فقدان
احوال-
باطل- كشمكش
تنقیحات-
حامد كمال الدين
بائیکاٹ کا ہتھیار.. اور قومی یکسوئی کا فقدان ہر بار جب کسی دردمند کی جانب سے مسلم عوام کو بائیکاٹ کا ۔۔۔
ديگر آرٹیکلز
Featured-
باطل- جدال
حامد كمال الدين
کچھ ’مسلم‘ معترضینِ اسلام! تحریر: حامد کمال الدین پچھلے دنوں ایک ٹویٹ میرے یہاں سے  ہو۔۔۔
اصول- منہج
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
پراپیگنڈہ وار propaganda war میں سیگ منٹیشن segmentation (جزء کاری) ناگزیر ہوتی ہے۔ یعنی معاملے کو ای۔۔۔
بازيافت-
ادارہ
ہجرت کے پندرہ سو سال بعد! حافظ یوسف سراج کون مانے؟ کسے یقیں آئے؟ وہ چار قدم تاریخِ ان۔۔۔
تنقیحات-
Featured-
حامد كمال الدين
میرے اسلام پسندو! پوزیشنیں بانٹ کر کھیلو؛ اور چال لمبی تحریر: حامد کمال الدین یہ درست ہے کہ۔۔۔
احوال- امت اسلام
ذيشان وڑائچ
ہمارے کچھ نوجوان طیب اردگان کے بارے میں عجیب و غریب الجھن کے شکار ہیں۔ کوئی پوچھ رہا ہے کہ۔۔۔
احوال- امت اسلام
حامد كمال الدين
’’سلفیوں‘‘ کے ساتھ تھوڑی زیادتی ہو رہی ہے!    عرب داعی محترم ابو بصیر طرطوسی کے ساتھ بہت م۔۔۔
اصول- عقيدہ
اداریہ-
حامد كمال الدين
شرکِ ’’ہیومن ازم‘‘ کی یلغار..  اور امت کا طائفہ منصورہ حالات کو سرسری انداز میں پڑھنا... واقعات م۔۔۔
احوال-
اصول- منہج
راہنمائى-
حامد كمال الدين
پاکستانی سیاست میں اسلامی سیکٹر کے آگے بڑھنے کے آپشنز تحریر: حامد کمال الدین میری نظر میں، اس۔۔۔
Featured-
ثقافت- خواتين
باطل- فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فیمینسٹ جاہلیت کو جھٹلاتی ایک نسوانی تحریر اجالا عثمان انٹرنیٹ سے لی گئی ایک تحریر جو ہمیں ا۔۔۔
تنقیحات-
حامد كمال الدين
"نبوی منہج" سے متعلق ایک مغالطہ کا ازالہ حامد کمال الدین ایک تحریکی عمل سے متعلق "نبوی منہج۔۔۔
متفرق-
ادارہ
پطرس کے ’’کتے‘‘ کے بعد! تحریر: ابو بکر قدوسی مصنف کی اجازت کے بغیر شائع کی جانے والی ای۔۔۔
باطل- فرقے
اعتزال
ادارہ
ایک فیس بکی بھائی نے غامدی صاحب کی جہاد کے موضوع پر ویڈیو کا ایک لنک دے کر درخواست کی تھی کہ میں اس ویڈیو کو ۔۔۔
باطل- فرقے
احوال- وقائع
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ایک بڑی خلقت واضح واضح اشیاء میں بھی فرق کرنے کی روادار نہیں۔ مگر تعجب ہ۔۔۔
باطل- كشمكش
حامد كمال الدين
تحریر: حامد کمال الدین کہتا ہے میں اوپن ایئر میں کیمروں کے آگے جنازے کی اگلی صف کے اندر ۔۔۔
احوال-
باطل- شخصيات و انجمنيں
حامد كمال الدين
حامد کمال الدین ’’تنگ نظری‘‘ کی ایک تعریف یہ ہو سکتی ہے کہ: ایک چیز جس کی دین میں گنجائش۔۔۔
جہاد- مزاحمت
احوال- امت اسلام
حامد كمال الدين
کشمیر کےلیے چند کلمات حامد کمال الدین برصغیر پاک و ہند میں ملتِ شرک کے ساتھ ہمارا ایک سٹرٹیجک معرکہ ۔۔۔
ثقافت- رواج و رجحانات
ذيشان وڑائچ
میرے ایک معزز دوست نے ویلینٹائن ڈے کے حوالے سے ایک پوسٹ پیش کی ہے۔ پوسٹ شروع ہوتی ہے اس جملے سے"ویلنٹائن ۔۔۔
بازيافت- تاريخ
ادارہ
علاء الدین خلجی اور رانی پدماوتی تحریر: محمد فہد  حارث دوست نے بتایا کہ بھارت نے ہندو۔۔۔
کیٹیگری
Featured
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
Side Banner
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
احوال
امت اسلام
ذيشان وڑائچ
امت اسلام
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اداریہ
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
اصول
منہج
حامد كمال الدين
عقيدہ
حامد كمال الدين
منہج
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ایقاظ ٹائم لائن
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ذيشان وڑائچ
مزيد ۔۔۔
بازيافت
ادارہ
تاريخ
ادارہ
سلف و مشاہير
مہتاب عزيز
مزيد ۔۔۔
باطل
جدال
حامد كمال الدين
فكرى وسماجى مذاہب
ادارہ
فرقےاعتزال
ادارہ
مزيد ۔۔۔
تنقیحات
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
ثقافت
خواتين
ادارہ
رواج و رجحانات
ذيشان وڑائچ
معاشرہ
عرفان شكور
مزيد ۔۔۔
جہاد
مزاحمت
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
راہنمائى
حامد كمال الدين
حامد كمال الدين
ابن علی
مزيد ۔۔۔
رقائق
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
اذكار و ادعيہ
حامد كمال الدين
مزيد ۔۔۔
فوائد
فہدؔ بن خالد
احمد شاکرؔ
تقی الدین منصور
مزيد ۔۔۔
متفرق
ادارہ
عائشہ جاوید
عائشہ جاوید
مزيد ۔۔۔
مشكوة وحى
علوم قرآن
حامد كمال الدين
مریم عزیز
ادارہ
مزيد ۔۔۔
مقبول ترین کتب
مقبول ترین آڈيوز
مقبول ترین ويڈيوز